مصائب سے نجات کیلئے مسلم حکمرانوں کو احساس کمتری سے نکلنا ہوگا،ڈاکٹر طاہر امین

مصائب سے نجات کیلئے مسلم حکمرانوں کو احساس کمتری سے نکلنا ہوگا،ڈاکٹر طاہر ...

ملتان(جنرل رپورٹر)مغرب نے اپنے اداروں کو مضبوط کرکے پوری دنیا پر اپنی حکمرانی قائم کی ہوئی ہے. پاکستان نے جب اپنے مفادات کے برعکس مغرب کے مطالبات ماننے سے انکار کیا تو انہوں نے پاکستان کو کمزور کرنے کی کوششیں کیں اس لئے پاکستان کو بھی اپنے اداروں کو مضبوط (بقیہ نمبر18صفحہ12پر )

کرنا ہوگا.. ان خیالات کا اظہارکانفرنس کے صدر نشین وائس چانسلر بہاء الدین زکریایونیورسٹی ملتان پروفیسر ڈاکٹر طاہر امین نے شعبہ علوم اسلامیہ و اسلامک ریسرچ سنٹر بہاء الدین زکریایونیورسٹی ملتان ، ادارہ تحقیقات اسلامی اسلامی یونیورسٹی اسلام آباد بتعاون ہائر ایجوکیشن کمیشن و پنجاب ہائر ایجوکیشن کمیشن کے زیراہتمام دو روزہ بین الاقوامی کانفرنس بعنوان ’’اسلامی تہذیب و ثقافت میں اخذ و عطا اور تازہ کاری کی روایت ‘‘کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا.انہوں نے کہاکہ پاکستان کے انجینئر ز اور قوم کے پختہ عزم کی بدولت پاکستان کو نیوکلیر پاور بنایا گیا بھارت جیسے ہمسائے کے ہوتے ہوئے نیوکلیئرپاور پاکستان کی سلامتی کی ضمانت ہے پاکستان کو مشکلات سے نکالنے کے لیے قوم کو ایک مرتبہ پھر اسی عزم کی ضرورت ہے. انہوں نے مزید کہا کہ اسلام میں شدت پسندی اور دہشت گردی کی کوئی گنجائش نہیں ہے . جج سپریم کورٹ آف پاکستان پروفیسر ڈاکٹر محمد الغزالی نے کہاکہ دنیا کی دیگر تہذیبیں دم توڑ رہی ہیں لیکن اسلامی تہذیب پوری دنیا میں پھیل رہی ہے اور نئے لوگ دائرہ اسلام میں داخل ہورہے ہیں . فرنگی بت پرست و دیگر تہذیبوں کی بجائے اسلام کو اپنے لیے خطرہ سمجھتے ہیں.مگر افسوس ہے کہ آج مسلمان قومی، جغرافیائی اور لسانی بنیادوں پر تقسیم ہوچکے ہیں.مسلم حکمرانوں کو احساس کمتری سے نکلنا ہوگا. تب ہی مسلم امہ مصائب سے نجات پاسکتی ہے .علی گڑھ مسلم یونیورسٹی انڈیا کے ڈاکٹر عبیداللہ فہدنے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہماری تہذیب میں برداشت کے کلچر کو پروان چڑھانا ہوگا. تہذیب میں جدت اور ڈیبیٹ کی حوصلہ افزائی کرنا ہوگی.تنقید کی اجازت ہو جبکہ تضحیک کی ہرگز اجازت نہیں ہونی چاہیے. ڈائریکٹر جنرل ادارہ تحقیقات اسلامی بین الاقوامی اسلامک یونیورسٹی اسلام آباد ڈاکٹر محمد ضیاء الحق نے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ آج مغرب اسلامی تہذیب سے خو ف زدہ ہے.کیونکہ اسلامی تہذیب فاتحیں کو فتح کرنے والی تہذیب ہے .علامہ محمد اقبال نے نوجوانوں کو ناامیدی سے نکالا تھا . اسلامی تہذیب ملکوں یا زمینوں کو فتح کرکے نہیں بلکہ دلوں کو فتح کرکے وجود میں آئی ہے. جس کی بنیاد نبی آخرالزمانﷺ نے رکھی تھی.ڈاکٹر رانا تنویر قاسم نے کہا کہ مغربی میڈیا کے غلبے سے نکلنا ہوگا صرف مفروضے کی بنیاد پر مغربی میڈیا نے مسلمانوں کو دہشتگرد قرار دیا ہوا ہے مسلمانوں کو مغربی اخلاقیات اپنانے کے بجائے اپنے اخلاقیات اپنانے ہونگے.چیئرمین شعبہ علوم اسلامیہ و ڈائریکٹر اسلامک ریسرچ سنٹر بہاء الدین زکریایونیورسٹی ملتان پروفیسر ڈاکٹر عبدالقدوس صہیب نے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ اسلامی تہذیب نے علم و ادب اور دیگر شعبوں میں بہت کارہائے نمایاں کارکردگی سرانجام دی. جن میں عمل ، اخوت ، اخلاق ، باہمی احترام اور انسانوں کا مل جل کر رہنا شامل ہے. کانفرنس کے دوسرے سیشن میں علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے پروفیسر ابوسفیان اصلاحی نے تصور سرسید پر مقالہ پیش کرتے ہوئے کہاکہ سرسید ا حمد خان کا گھرانہ ثقافتی اور علمی اعتبار سے اسلامی تھا . دہلی میں شاہ ولی اللہ محدث اور سرسید احمد کا گھر علم و دانش کا محور تھے .یونیورسٹی آف چٹاگانگ بنگلہ دیش کے پروفیسر ڈاکٹرمحمدنجم الحق ندوی نے کہاکہ انسان جتنی بھی کوشش کرلے اپنی تہذیب سے نکل نہیں سکتا . زمانہ گزرنے کے ساتھ ساتھ کلچر اور تہذیب میں تعصب آجاتا ہے.کانفرنس میں ڈین ڈاکٹر شفقت اللہ ، ڈاکٹر محمد ادریس لودھی سمیت بڑی تعداد میں فیکلٹی ممبران و طلباء طالبات نے شرکت کی.

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...