باہمی رضا مندی سے کی گئی شادی ختم کرنے کا پنچایت کا فیصلہ غیر قانونی

باہمی رضا مندی سے کی گئی شادی ختم کرنے کا پنچایت کا فیصلہ غیر قانونی

نئی دہلی(آئی این پی)بھارتی سپریم کورٹ نے رضامندی سے کی گئی شادی پر’’پنچایت‘‘ کا فیصلہ غیر قانونی قرار دے دیا ہے۔ بھارتی میڈیا کے مطابق بھارتی سپریم کورٹ نے 2بالغوں کی باہمی رضامندی سے کی گئی شادی کو ختم کرنے کی نیت سے کسی بھی قسم کی کھاپ پنچایتوں یا اجتماع کے فیصلے کو غیر قانونی قراردیا۔ چیف جسٹس دیپک مشرا کی سربراہی میں سپریم کورٹ کی 3رکنی بنچ نے فیصلے میں کہا ہے کہ 2بالغوں کی آپسی رضامندی سے کی گئی شادی کو توڑنے کیلئے کی جانے والی غیر قانونی پنچایت میٹنگ یا جلسہ یا اجتماع کے خلاف تادیبی کارروائی کی جائیگی۔ سپریم کورٹ نے یہ بھی کہا ہے کہ جب تک مرکزی حکومت اس مسئلے پر قانون نہیں بناتی اس وقت تک یہ حکم نافذ رہے گا۔ 3ججوں کے بنچ میں جسٹس اے ایم کھانولکر اور ڈی وائی چندر چوربھی شامل تھے۔ عدالت کھاپ پنچایت کے خطرات سے نمٹنے کیلئے اقدامات کا تعین کریگی۔

بھارتی سپریم کورٹ

مزید : علاقائی


loading...