راولپنڈی کچہری میں دوہرا قتل، چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ کانوٹس

راولپنڈی کچہری میں دوہرا قتل، چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ کانوٹس

راولپنڈی (آن لائن)چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ جسٹس یاور علی کی جانب سے جوڈیشل کمپلیکس میں فائرنگ اور زیر حراست ملزم سمیت 2 افراد کے قتل کے واقعہ کا نوٹس لینے پر راولپنڈی پولیس نے جوڈیشل کمپلیکس میں فائرنگ اوردہرے قتل کے واقعہ پر تحقیقات کا دائرہ وسیع کر تے ہوئے حملہ آور کواسلحہ فراہمی کے شبہ میں 2 افراد کو حراست میں لے لیا ہے جبکہ 3 پولیس اہلکاروں سے پوچھ گچھ کے ساتھ وکلا کے ریکارڈ کی پڑتال بھی شروع کر دی ہے تاہم رات گئے تک دوہرے قتل کا مقدمہ درج نہ ہو سکا۔ذرائع کے مطابق پولیس نے وکلا کی گاڑیوں میں سہولت کاروں کی موجودگی کاشبہ ظاہر کیا ہے تاہم پولیس اس زاویئے سے تحقیقات کر رہی ہے کہ مسلح حملہ آور سیکورٹی گیٹ پر اہلکاروں کوکیسے چکمہ دے کر اندرداخل ہوااس مقصد کے لئے پولیس نے کمرہ عدالت اور جوڈیشل کمپلیکس میں لگے کلوز سرکٹ کیمرون کی ریکارڈنگ حاصل کر لی ہے ۔ چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ یاور علی نے جوڈیشل کمپلیکس میں دوہرے قتل کے واقعہ کا سخت نوٹس لیتے ہوئے آئی جی پنجاب عارف نواز خان پر سخت برہمی کا اظہار کیا جس پر آئی جی پنجاب نے آر پی او راولپنڈی اور سی پی او راولپنڈی کی سخت سرزنش کرتے ہوئے واقعہ کی ابتدائی رپورٹ طلب کی تھی ۔واقعہ کے فوری بعد ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج خالد نواز نے فوری طور پر ہنگامی اجلاس طلب کیا جس میں آر پی او، سی پی او، رجسٹرار لاہور ہائی کورٹ بہادر خان، ڈائریکٹر جنرل ڈسٹرکٹ جوڈیشری راؤ عبدالجبار، ڈسٹرکٹ بار راولپنڈی کے صدر خرد مسعود کیانی، جنرل سیکرٹری راجہ عامر محمود اور دیگر شریک تھے اس دوران چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ نے بھی فون پر رابطہ کرتے ہوئے صورتحال سے آگاہی حاصل کی اور واقعہ پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے آج آج علیٰ سطح کا اجلاس طلب کرلیا ہے جس میں رجسٹرار ہائی کورٹ، ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج راولپنڈی ،آئی جی پنجاب کیپٹن (ر)عارف نواز خان ،آر پی او اور سی پی او راولپنڈی سمیت دیگر اعلیٰ افسران اور وکلا قیادت شریک ہو گی ۔

راولپنڈی نوٹس

مزید : علاقائی


loading...