کوہاٹ جیل کے رہائشی کوارٹر میں خاتون کی خود کشی کا ڈارپ سین

کوہاٹ جیل کے رہائشی کوارٹر میں خاتون کی خود کشی کا ڈارپ سین

کوہاٹ(بیورورپورٹ) کوہاٹ جیل کے رہائشی کوارٹر میں خاتون کی خود کشی کا ڈارپ سین ہوگیا ۔جرماپولیس نے اہلیہ کی خود کشی کا ڈراما رچانے والے جیل پولیس کانسٹیبل کو گرفتار کرکے قتل کا مقدمہ درج کرلیا ہے۔ملزم نے گھریلوں چپقلش پر اپنی اہلیہ کو گلہ دبا کر قتل کرنے کا اعتراف جرم کرلیا ہے۔قتل کی واردات کے بعد جرم چھپانے اور واقعے کو خود کشی کا رنگ دینے کیلئے ملزم نے اپنی اہلیہ کے گلے میں پھندا ڈال کر لاش دروازے کی چوکٹ کیساتھ لٹکا دی تھی۔جرما پولیس نے واقعے کی رپورٹ ملزم کے ابتدائی بیان کی روشنی میں درج کرتے ہوئے تحقیقات کے دوران قتل کو خود کشی کا رنگ دینے کے جرم کو بے نقاب کرلیا۔قتل کا مقدمہ تھانہ جرما میں مقتولہ کی والدہ کی مدعیت میں اسکے خاوند کے خلاف درج کرلیا گیا ہے۔ایس ایچ او تھانہ جرما سب انسپکٹر وقار احمد نے واقعہ کے حوالے سے تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ 19مارچ کی رات ڈسٹرکٹ جیل کوہاٹ کے ایک رہائشی کوارٹر میں ایک خاتون مسماۃ (ح) کو گلہ دبا کر قتل کرنے کے بعد اسکی لاش کمرے کے دروازے کی چوکٹ کیساتھ لٹکا تے ہوئے مقتولہ کے خاوند جیل پولیس کانسٹیبل افتخار علی ولد عبدالجلیل ساکن زڑہ گنڈی ورانہ احمد آباد کرک نے واقعے کو خود کشی کا رنگ دیکر ابتدائی رپورٹ درج کرلی۔ایس ایچ او نے بتایا کہ وقوعہ کی تفتیش کیلئے ضلعی پولیس سربراہ عباس مجید خان مروت نے تحقیقاتی ٹیم تشکیل دیکر واقعے کے اصل محرکات معلوم کرنے کے احکامات جاری کئے ۔ایس ایچ او کے مطابق تحقیقاتی ٹیم نے سائنسی بنیادوں پر تفتیش کا آغاز کرتے ہوئے جائے وقوعہ سے اہم شواہد قبضے میں لے لئے اور مقتولہ کی لاش کا پوسٹ مارٹم کرایا تو نہایت باریک بینی سے چھان بین کے دوران ثابت ہوا کہ یہ خود کشی نہیں بلکہ قتل کا وقوعہ ہے اور مقتولہ کو گلہ دبا کرقتل کیا گیا ہے۔ایس ایچ او نے بتایا کہ قتل کے اس واقعے کی اصل حقائق معلوم کرنے کیلئے مقتولہ کے خاوند کو بھی شامل تفتیش کیا گیا جس نے ابتدائی پوچھ گچھ میں اپنی اہلیہ کو قتل کرنے کا اعتراف کرتے ہوئے اہم سربستہ راز اگل دئیے۔ایس ایچ او نے بتایا کہ اپنی اہلیہ کے قتل میں ملوث ملزم افتخار علی کو باضابطہ طور پر گرفتار کرلیا گیا ہے اور اسکے خلاف مقتولہ کی والدہ مسماۃ(ش)کی مدعیت میں قتل کی ایف آئی آر تھانہ جرما میں درج کرلی گئی ہے۔ادھر ضلعی پولیس سربراہ عباس مجید خان مروت نے اندھے قتل کی اس واردات کا سراغ لگا کر ملوث ملزم کی گرفتاری کو اہم کامیابی قرار دیکر پولیس ٹیم کیلئے نقد انعامات اور توصیفی اسناد کا اعلان کیا ہے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...