کرنسی نوٹوں سے کورونا وائرس کا شکار ہونے والے ٹیکسی ڈرائیور کی موت

کرنسی نوٹوں سے کورونا وائرس کا شکار ہونے والے ٹیکسی ڈرائیور کی موت
کرنسی نوٹوں سے کورونا وائرس کا شکار ہونے والے ٹیکسی ڈرائیور کی موت

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) کرنسی نوٹوں سے کورونا وائرس کا شکار ہونے والے ٹیکسی ڈرائیور کی موت واقع ہو گئی۔ میل آن لائن کے مطابق 56سالہ سپنسرکراش نامی یہ ڈرائیور لندن میں ٹیکسی چلاتا تھا۔ 18مارچ کو اس میں کورونا وائرس کی علامات ظاہر ہوئیں اور ٹیسٹ کروانے پر تصدیق ہو گئی کہ وہ کورونا وائرس میں مبتلا ہو چکا ہے۔ وہ ہسپتال میں زیرعلاج تھا جہاں اس کی گزشتہ روز موت واقع ہو گئی۔

رپورٹ کے مطابق سپنسرکراش کے لواحقین کا کہنا ہے کہ وہ برطانیہ میں وباءپھیلنے کے بعد بھی لندن میں ٹیکسی چلاتا رہا۔ وہ لوگوں سے کرائے میں جو کرنسی نوٹ لیتا تھا، انہی سے اسے وائرس لاحق ہوا۔ سنپسر کی 18سالہ بیٹی نتاشا کا کہنا تھا کہ ”میرا باپ 22سال سے ٹیکسی چلا رہا تھا اور ہم سوچ بھی نہیں سکتے تھے کہ اس کا یہ پیشہ اس انداز میں اس کی موت کا سبب بن جائے گا۔ میں دیگر لوگوں سے بھی کہوں گی کہ وہ کسی بھی طریقے سے لین دین کرتے ہوئے کرنسی نوٹوں سے محتاط رہیں کیونکہ یہ کورونا وائرس کے پھیلنے کا ایک بڑا سبب ثابت ہو رہے ہیں۔“

مزید :

برطانیہ -کورونا وائرس -