ایک سال میں چینی و دیگر اشیائے خورونوش ریکارڈ مہنگی ہوئیں 

      ایک سال میں چینی و دیگر اشیائے خورونوش ریکارڈ مہنگی ہوئیں 

  

   

لاہور (خصوصی رپورٹ)پاکستان شوگر ملز ایسوسی ایشن کا کہنا ہے کہ گزشتہ ایک سال میں صرف چینی ہی نہیں بلکہ دیگر اشیائے خورونوش کی قیمتوں میں بھی زبردست اضافہ ہوا ہے۔ ایک سال کے دوران ملک بھر میں کھانے پینے کی اشیاء میں زبردست اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے گزشتہ ایک سال میں ملک بھر میں گھی، خوردنی تیل، مرغی کے گوشت سمیت دیگر اشیاء کی قیمتوں میں زبردست اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے۔پاکستان شوگر ملز ایسوسی ایشن پنجاب زون کی رپورٹس کے مطابق مارچ 2020ء کے مقابلے میں مارچ 2021ء میں اڑھائی کلو کوکنگ آئل کی قیمت میں 212.51 روپے، اڑھائی کلو گھی کی قیمت میں 110.62 روپے، ایک کلو برائیلر مرغی کے گوشت کی قیمت میں 127.5 روپے ایک درجن انڈوں کی قیمت میں 46.5روپے، 20 کلو آٹے کے تھیلے کی قیمت میں 51.52 روپے اور چاول کی قیمت میں 10.29 روپے فی کلو اضافہ ہوا۔جبکہ چینی کی قیمت میں صرف 20روپے اضافہ ہوا جو کہ تقریباً 20%بنتا ہے جبکہ دیگر اشیاء ضروریہ کی قیمتوں میں 50فیصد سے 100فیصد تک اضافہ ہوا۔ مارچ کے مہینے میں ٹریڈنگ کارپوریشن آف پاکستان کی جانب سے چینی کی درآمد کیلئے ٹینڈر دیئے گئے جس کے پہلے ٹینڈر میں کراچی میں چینی کی قیمت بغیر ٹیکس کے 93 روپے تھی مسترد کر دیا گیا۔ دوبارہ ٹینڈرپر قیمت 95 روپے ملتی تھی اسے بھی مسترد کردیا گیا۔ پاکستان کیلئے باہر سے چینی منگوانا فائدہ مند نہیں،جب ملک میں چینی کی وافرمقدار موجود ہے تو حکومت ذمہ داران سے براہ راست بات چیت کرکے سپلائی لائن بحال کرے تاکہ مارکیٹ میں چینی کی مناسب سپلائی میسر ہو۔

چینی

مزید :

صفحہ آخر -