مملکت خداد اد قدرتی وسائل سے مالا مال ملک ہے: پین

مملکت خداد اد قدرتی وسائل سے مالا مال ملک ہے: پین

  

 چکدرہ(جاوید الرحمن سے)کرونا ڈرامہ بند کرو تعلیم کو بحال کرو تعلیمی اداروں کی بندش نامنظور کرونا صرف تعلیمی اداروں اور بازاروں میں ہوتا ہے پاکستان دنیا کا ایسا ملک ہے کہ اللہ تعالی نے تمام سہولیات عطا کی ہے لیکن اچھی لیڈرشپ کی وکہ سے تمام شعبوں میں ناکامی کا سامنا ہے اجکل دنیا میں کرونا تیزی سے پھیل؛ چکا ہے لیکن وہ ایس او پیز اور احتیاط سے اس پر قابو پالیا ہے عبدلودود۔ انہی خیالات کا اظہار خیال کرتے ہوئے پین دیر لوئر خے صدر عبدلودود اور جماعت اسلامی یوتھ ادینزائے کے صدر عبید اللہ تاجک نے پاکستان کے ساتھ خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ لیکن پاکستان میں کرونا صرف تعلیمی اداروں اور غریب دکاندروں میں ہے امیر اور خاص کر حکومت کے جلسوں اور تقاریب میں کرونا نام کی کوئی چیز موجود نہیں دنیا میں وہی قوموں نے ترقی کی ہے جن کے عوام زیور تعلیم سے اراستہ ہو تووہ جدید ٹیکنالوجی سے لیس ہوگا  پرایؤٹ تعلیمی ادارے ملک میں ریڈکی ھڈی کی حثیت رکھتے ہے لیکن بدقسمتی سے حکومت نے کرونا کی اڑ میں تعلیمی کو تباہ کیا اگر حکومت نے فوری طور پر تعلیمی اداروں کونہ کھول دیا تو پورے ملک میں احتجاجی تحریک شروع ہوگی اور وزیر اعظم اور وزیر اعلی ہاوسز کے سامنے درھنا دینگے اور نقصان کی صورت میں حکومت ذمہ وار ہوگی انھوں نے کہا کہ تعلیمی اداروں کی بندش کی وجہ سے زیادہ تر لوگ منشیات اور دوسرے غلط کاموں میں مصروف ہوگئے بچوں کے مستقبل تباہ ہوئی کوئی پرسان حال نہیں انھوں نے کہا کہ پاکستان میں تین کروڑ سے زیادہ بچوں نے سکول چھوڑا وہ تعلیم کی زیور سے محروم ہوئے اور دس ہزار سے زیادہ تعلیمی ادارے مالی بحران کی وجہ سے بند ہوئی حکومت کی تعلیمی ایمرجنسی کہا گئی یہ صرف ایک مذاق تھا کرونا کو ایک سال ہوگئی لیکن اج تک حکومت نے کسی بھی تعلیمی ادارے کی مدد کی بلکہ وہ انتظامیہ کی مدد سے تعلیمی اداروں کو سیل کرتے ہے اگر پاکستان میں پرایؤٹ تعلیمی ادارے موجود نہ ہوتی تو نوے فیصد عوام تعلیم حاصل کرنے سے محروم ہوجاتا لیکن موجودہ حکومت نے تمام شعبوں خاص کر تعلیم کو تباہ کیا عمران خان جلسہ کرتا ہے اس میں کرونا نہیں ہوتا اور جب سکول کھول دیا جاتا ہے تو اس میں کرونا ہوجاتا ہے تعلیم بچاؤ مہم شروع کیا ہے اور اس وقت تک جاری رہے گا جب تک سکولوں کو دوبارہ بحال نہ کیا جائے انھوں نے کہا کہ حکومت کہتی ہے کہ ان لائن کلاسز شروع کیا جائے تو ہمارے علاقوں میں انٹر نٹ کی سہولت موجود ہی نہیں تو ان لائن کلاسز کا کیا فائدہ،اور ہم تو غریب لوگ ہے پہلے تو موبائل اور کمپیوٹر موجود نہیں اور اگر کسی طریقے سے وہ بھی مل جائے تو نیٹ کی سہولت کہا سے ایگی انھوں نے کہ حکومت یورپ کی مثال دیتی ہے لیکن وہ عوام کو سہولیات دیتی ہے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -