ایپل کمپنی چھوڑنے والی خاتون نے پاکستانی منیجر پر شرمناک الزام عائد کردیا

ایپل کمپنی چھوڑنے والی خاتون نے پاکستانی منیجر پر شرمناک الزام عائد کردیا
ایپل کمپنی چھوڑنے والی خاتون نے پاکستانی منیجر پر شرمناک الزام عائد کردیا

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک)سنہ 2019ءمیں ایپل سے نوکری چھوڑنے پر مجبور ہونے والی بھارتی خاتون نے ایپل میں کام کرنے والے ایک پاکستانی اورایک بھارتی منیجر پر شرمناک الزام عائد کر دیا۔

 بھارتی نیوز ویب سائٹ دی پرنٹ کے مطابق اس خاتون کا نام انیتا نیریانی شولزے ہے جس نے کیلیفورنیا کی ایک عدالت میں اپنے ساتھ ہونے والے صنفی و جنسی امتیاز پر مبنی سلوک کے الزام کے تحت مقدمہ درج کرایا۔

انیتا نے عدالت کو بتایا ہے کہ اس کے دو منیجرز، جن میں ایک بھارتی تھا اور ایک پاکستانی، اس کے ساتھ انتہائی ہتک آمیز سلوک کرتے تھے جس کی وجہ سے وہ نوکری چھوڑ نے پر مجبور ہوئی۔ انیتا کا کہنا تھا کہ یہ لوگ اس کے ساتھ ایسے غلاموں والا سلوک کرتے تھے جیسے وہ اپنے آبائی ممالک میں ہوں۔انیتا نے عدالت کو بتایا کہ اس کے ساتھ یہ سلوک اس لیے کیا گیا کیونکہ وہ نچلی ہندو ذات ’دلت‘ سے تعلق رکھتی تھی۔ دونوں منیجرز اس کے ساتھ اچھوتوں کا سا سلوک کرتے تھے۔ وہ باقی لوگوں کو میٹنگز میں بلاتے۔ صرف ایک انیتا کو میٹنگز میں نہیں بلایا جاتا تھا۔ وہ بلا وجہ اس پر تنقید کرتے، اس کے کام کو گھٹیا قرار دیتے اور اس کے بونس رکوا دیا کرتے تھے۔انیتا کے اباﺅ اجداد کا تعلق چونکہ پاکستان کے صوبہ سندھ سے تھا اور وہ ہجرت کرکے بھارت جا بسے تھے چنانچہ اس کا ان دونوں ملکوں سے تعلق تھا اور ان دونوں ملکوں ہی کے منیجرز اس کے دلت ہونے کی وجہ سے اس کے ساتھ غیرانسانی سلوک کرتے رہے۔رپورٹ کے مطابق ایپل کی طرف سے تاحال اس مقدمے پر کوئی ردعمل سامنے نہیں آیا۔ 

مزید :

بین الاقوامی -