وفاقی بجٹ میں عوام کو لالی پاپ دیا گیا‘ ڈاکٹر وسیم اختر

وفاقی بجٹ میں عوام کو لالی پاپ دیا گیا‘ ڈاکٹر وسیم اختر

بہاولپور (بیورورپورٹ ) پنجاب اسمبلی میں جماعت اسلامی کے پارلیمانی لیڈر ڈاکٹر سید وسیم اختر اور کسان بورڈ پاکستان کے مرکزی چیئر مین جام حضور بخش لاڑ نے وفاقی بجٹ کو غریب دشمن قراردیتے ہوئے کہاہے کہ بجٹ میں عوام کو لالی پاپ دیا گیا ہے۔ریلیف دوردور تک نظر نہیں آتا(بقیہ نمبر37صفحہ12پر )

۔یہ ناکام بجٹ ہے جس میں قرضوں کے سود پر 1363ارب روپے خرچ ہوینگے۔تنخواہوں اورپنشن میں صرف10فیصد اضافہ نہ ہونے کے برابر ہے۔ملازمین کی تنخواہوں میں مہنگائی کے تناسب سے اضافہ ناگزیر ہے۔آئی ایم ایف کی ڈکٹیشن پر تیارکیاجانے والا بجٹ خسارے کابجٹ ہے جس سے 20کروڑ عوام کوسخت مایوسی کے سواکچھ نہیں ملا۔حکمرانوں نے اپنے اس بجٹ میں بھی عوام پر بھاری ٹیکسز عائد کردیئے ہیں۔انہوں نے کہاکہ ایک طرف عوام کو قرضوں میں جکڑدیاگیا ہے تو دوسری طرف وزیر اعظم ہاؤس کے بجٹ میں5.26فیصد اورایوان صدر کے بجٹ میں5.8فیصد اضافہ ہوگیا ہے۔یعنی ایوان صدر کو959.69ملین روپے اور وزیر اعظم کے دفتر کو91کروڑ67لاکھ22ہزارروپے مختص کیے گئے ہیں۔جس سے وزیر اعظم ہاؤس کے لیے یومیہ25لاکھ روپے اور ایوان صدر کے لیے یومیہ ساڈھے12لاکھ روپے خرچ کیے جاسکیں گے جوکہ غریب عوام پر بوجھ ہے۔حکمران عوام کے خون پسینے کی کمائی کو دونوں ہاتھوں سے لوٹنے میں مصروف ہیں۔احتساب کانظام عملاًناپید ہوچکا ہے۔فرسودہ نظام ملکی ترقی کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ ہے۔

مزید : ملتان صفحہ آخر