ٹرمپ کی اسلام دشمن پالیسیاں قابل مذمت ہیں، حاجی حنیف طیب

ٹرمپ کی اسلام دشمن پالیسیاں قابل مذمت ہیں، حاجی حنیف طیب

کراچی (اسٹاف رپورٹر ) نظام مصطفی پارٹی کے سربراہ سابق وفاقی وزیرڈاکٹرحاجی محمدحنیف طیب نے کہاہے کہ امریکہ جیسے آزادی خیال ملک میں بیس سالوں سے امریکی مسلمانوں کے لئے بطورخاص امریکی صدرکی جانب سے رمضان المبارک کے بابرکت مہینے میں مسلم رہنماؤں کیلئے دعوت افطارہوتا ہے پچھلے صدور اس روایت کو برقرار رکھے ہوئے تھے جو خود انکے مفاد میں ہے اورامریکی مسلمانوں کا دل جیتنے کی کوشش ہے مسلمانوں کا دل فلسطینیوں کے مقابلے میں اسرائیل کی مدد کرنے والے اور کشمیری مظلوم عوام کے مقابلے میں بھارتی مظالم پر خاموش رہ کر ان کی سرپرستی کرنے والے کیسے جیت سکتے ہیں۔ لیکن امریکہ کے موجودہ صدرڈونلڈٹرمپ نے اس روایت کو ختم کردیاہے جوانسانی حقوق اوراقلیتی حقوق کی قطعاًمنافی اوراقوام متحدہ کے حقوق انسانی کے چارٹرکے بھی خلاف ہے اور مسلمانوں کے خلاف تعصب پرمبنی رویہ بھی ہے ۔انہوں نے کہاکہ حال ہی میں سعودی عرب میں ہونے والی اسلامی وامریکی سربراہ کانفرنس میں ٹرمپ نے صرف اپنے ملکی مفادکاخیال کیاجبکہ کشمیر میں ڈھائے جانے والے بھارتی مظالم کاکوئی تذکرہ نہیں کیاگیانہ ہی وزیراعظم پاکستان کی جانب سے اس ظلم پرکوئی صدابلندکی گئی۔بلکہ پاکستان میں بھارت کی جانب سے کرائی جانے والی دہشت گردی کابھی کوئی ذکرنہیں کیاگیاجس میں ہزارہاپاکستانی فوجی وسول عوام شہیدہوئے۔ یہ بات بھی قابل غورطلب ہے کہ ٹرمپ سعودی عرب کے دورہ کے فوری بعداسلام دشمن ملک اسرائیل کے دورے پرچلے گئے جو اس بات کا واضح ثبوت ہے کہ ٹرمپ نے مسلمانوں کے زخموں پر نمک پاشی کی ہے۔انہوں نے کہاکہ اسلامی ممالک بالخصوص سعودی عرب کوامریکی صدرڈونلڈٹرمپ کے اسلام کش پالیسیوں پرمذمت کرنی چاہیے اور اسلامی ممالک کوبھی ٹرمپ سے ہوشیاررہنے کی ضرورت ہے وہ یہودیوں کے ایجنڈے پرعمل پیراہے جس کامقصدمسلمانوں اور اسلامی ممالک کومالی طورپرنقصان پہنچانااور ان کی سرزمین کواسلحہ خانہ میں تبدیل کرناہے۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر