حساس ادارے حکومتی عہدیداروں کی کارکردگی رپورٹس مرتب کرنے لگے

حساس ادارے حکومتی عہدیداروں کی کارکردگی رپورٹس مرتب کرنے لگے

  



لاہور(رپورٹ : یونس باٹھ) وفاقی و صوبائی وزرا، مشیروں، معاونین خصوصی و دیگر حکومتی عہدیداروں کی کارکردگی کی رپورٹس مرتب ہونے لگیں، ۔ کئی محکموں میں میرٹ کی دھجیاں اڑائی گئیں اور اس کی نشاندہی بھی کی گئی، لیکن متعلقہ عہدِداروں نے کوئی نوٹس نہ لیابلکہ اپنے اختیارات کا ناجائز استعمال بھی کیا مالی بے ضابطگیوں اور بدعنوانی میں ملوث عہدیداروں کے کیس نیب کو بھجوانے کا منصوبہ تیار کر لیا گیا۔ معتبر ذرائع کے مطابق اہم شخصیت کی جانب سے رپورٹ بنانے کا یہ ٹاسک حساس اداروں کو دیا گیا۔ جس پر کام جاری ہے، پہلے بھی ایسی پرفارمنس رپورٹس تیار کی جاتی رہی ہیں، لیکن اس بار جو رپورٹ تیار کی جارہی ہے اس میں تمام تر مثبت اور منفی پہلوؤں کو مدِ نظر رکھا جائے گا۔ رپورٹ میں یہ بھی بتایا جائے گا کہ ان عہدِداروں کی جانب سے کتنے اقدامات میرٹ پر اور کتنے میرٹ کے بر عکس کئے گئے؟ انہوں نے کتنے افراد کو ملازمت دلوائی؟ کتنے من پسند افراد کو ٹھیکے دیے؟ ان کے محکموں میں کتنی بہتری آئی؟ کتنے نئے پراجیکٹس شروع کیے گئے؟ عوامی مسائل حل کرنے میں کتنے سنجیدہ رہے اور کیا اقدامات اٹھائے؟ کتنے غیر ملکی دورے کئے اور انکے نتائج کیا نکلے؟ ۔ خفیہذرائعنے بھی اس با ت کی تصدیق کی ہے کہ حساس ادارے رپورٹس مرتب کر رہے ہیں، اب یہ ان کی ذمہ داری ہے کہ وہ ایسے معاملات کی نشاندہی کریں جو درست سمت میں نہیں چلائے گئے اورذمہ دار حکام نے اس پر کیا نوٹس لیا ۔زرائع کے مطا بق ا ن رپورٹس کے بعد دیکھا جا ئے گا کہ کس نے کتنی کر پشن یا لوٹ ما ر کی پھر ان کے خلاف فائلیں تیار کر کے مقد مات کے لیے کیس نیب کے سپرد کیے جا ئیں گے ۔

مزید : علاقائی


loading...