کوہاٹ ، غیر قانونی کلاس فور بھرتیاں وزیر قانون کیخلاف تحقیقات کیلئے نیب میں درخواست جمع

کوہاٹ ، غیر قانونی کلاس فور بھرتیاں وزیر قانون کیخلاف تحقیقات کیلئے نیب میں ...

  



کوہاٹ(بیورو رپورٹ) صوبائی وزیر قانون امتیاز شاہد قریشی کی RHC استرزئی میں غیر قانونی اور ناجائز کلاس فور بھرتیوں کے خلاف استرزئی کونسلران ملکان نے امتیاز شاہد قریشی کے خلاف نیب میں تحقیقات کے لیے درخواست جمع کرا دی موجودہ حکومت کے انصاف کے دعوے دار حکومتی ڈاکوؤں کی وجہ سے مقامی لوگوں کے بجائے شکردرہ کے لوگوں کو آر ایچ سی استرزئی میں کلاس فور کیا گیا ان خیالات کا اظہار پاکستان تحریک انصاف کے سرگرم کارکن ناظم ویلج کونسل استرزئی صفدر حسین‘ ملک محمد سجاد‘ ملک عنایت علی‘ ملک سجاد جعفر‘ ملک قسمت علی‘ کونسلر واجد علی‘ کونسلر امتیاز علی‘ ملک حکمت علی‘ ملک مجاہد حسین نے میڈیا نمائندوں کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہا کہ استرزئی بالا قوم نے اپنی زمین رقبہ 52 کنال کھاتہ نمبر1611 کھتونی نمبر2753 خسرہ نمبر3320 واقع استرزئی بالا آر ایچ سی ہسپتال اور GHSS کے لیے مفت فراہم کی مگر استرزئی بالا کے غریب اور بے روزگار عوام کو ایک بھی آسامی درجہ چہارم کی نہیں دی گئی حال ہی میں تبدیلی سرکار کے ٹھیکیدار صوبائی وزیر قانون امتیاز شاہد قریشی نے تحصیل لاچی علاقہ شکردرہ سے دو آدمی بھرتی کر کے ایک بار پھر استرزئی بالا کے عوام کے حقوق پر ڈاکہ ڈالا اس حوالے سے گاؤں کے مشران کونسلران نے کٹھ پتلی ڈسٹرکٹ صحت آفیسر ڈی ایچ او کوھاٹ کے ساتھ ملاقات کی لیکن وہ تسلی بخش جواب دینے کے بجائے دھمکیوں پر اتر آئے ضلعی ناظم‘ دپٹی کمشنر اور ڈی پی او کے ساتھ علاقہ عوام اپنا احتجاج ریکارڈ کرا چکے ہیں مگر ابھی تک کسی نے بھی ایکشن نہیں لیا اور گاؤں کے عوام نے دو مرتبہ آر ایچ سی کے سامنے پرامن احتجاج ریکارڈ کرایا مگر تبدیلی سرکار کے ٹھیکیداروں نے کوئی ایکشن نہیں لیا ناظم صفدر حسین نے واضح کیا کہ ہم اپنے حق کے لیے ہر ادارے کا دروازہ کھٹکھٹائیں گے ہم محکمہ نیب‘ محکمہ اینٹی کرپشن‘ چیف سیکرٹری‘ صوبائی احتساب کمیشن‘ صوبائی محتسب اور دیگر تحقیقاتی اداروں میں اپنے حق کے لیے درخواستیں جمع کرا رہے ہیں حتیٰ کہ ہم چیئرمین PTI عمران خان کے ساتھ بھی عید کے بعد ملاقات کریں گے اور صوبائی وزیر قانون کی ناانصافیوں سے آگاہ کریں گے انہوں نے کہا کہ ہم پیچھے ہٹنے والے نہیں اپنے حق کے لیے کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کریں گے اور ساتھ ہی ہم کٹھ پتلی ڈسٹرکٹ ہیلتھ آفیسر ڈی ایچ او کوھاٹ ڈاکٹر مشرف جو سیاسی لیٹروں کا غلام ہے کا بھی کوھاٹ سے تبادلے کا مطالبہ کرتے ہیں کیوں کہ اس ناانصافی میں ڈی ایچ او برابر کا شریک ہے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...