یہ سب کچھ کیوں ہورہاہے؟ دلت، درانی کے دفاع میں آگیا

یہ سب کچھ کیوں ہورہاہے؟ دلت، درانی کے دفاع میں آگیا
یہ سب کچھ کیوں ہورہاہے؟ دلت، درانی کے دفاع میں آگیا

  



اسلام آباد (ویب ڈیسک) بھارتی خفیہ ایجنسی کے سابق سربراہ اے ایس دلت نے کہا ہے کہ جنرل (ر)اسد درانی کے خلاف جو کچھ ہورہا ہے افسوسناک ہے، ہم دونوں تو صرف امن کی بات کررہے تھے تو کیا یہ سوچا جائے کہ پاکستان امن کا خواہاں نہیں ہے۔

درانی نے کوئی نئی بات نہیں کی، کسی کے خلاف بات نہیں کی تو یہ سب کچھ کیوں ہورہا ہے، پاکستان اگر امن چاہتا ہے تو جنرل (ر) درانی نے ایسی کونسی غلطی کی ہے جس پر یہ سب ہورہا ہے۔ بھارت میں میرے ساتھ تو کو ئی ایسا مسئلہ درپیش نہیں ہے۔ تنقید ہوسکتی ہے ہونی بھی چاہیے کہ آزادملک میں ایسا ہوتا ہے تاہم جنرل (ر) درانی کے خلاف جو ایکشن لیا گیا وہ بدقسمتی ہے۔

نجی ٹی وی سے خصوصی بات چیت کرتے ہوئے اے ایس دلت نے کہا کہ میں نے تجویز دی تھی کہ جنرل باجوہ کو بھارت کے دورے کی دعوت دینی چاہیے پتہ نہیں کہ ہماری حکومت میری بات سنتی ہے یا نہیں۔ وزرائے اعظم کو تو ہمیشہ ہی دعوت دی جاتی ہے اور خوش آمدید کہا جاتا ہے تاہم میں نے اس تناظر میں بات کی کہ پاکستان بارے سوچا جاتا ہے کہ وہاں جو کچھ ہے فوج کے کنٹرول میں ہے۔ معمولی باتوں پر بلا وجہ شور نہیں مچانا چاہیے۔ میں اور جنرل (ر) درانی اپنی طرف سے ٹھیک بات کررہے ہیں۔ دونوں ملکوں کے نیشنل سکیورٹی ایڈوائزر تو ملتے رہتے ہیں۔

جنرل (ر) درانی اور میرا ملنا اور نیشنل سکیورٹی ایڈوائزر کا ملنا مختلف بات ہے۔ ہم تو خواب دینے والے ہیں او راچھے کی امید رکھتے ہیں۔ اگر ٹھیک طرح سے سوچا جائے تو امن کیلئے بہت کچھ ہوسکتا ہے۔ جنرل (ر) درانی کے ساتھ جو سلوک روا رکھا گیا وہ ٹھیک نہیں ہے۔

مزید : علاقائی /اسلام آباد


loading...