ینگ ڈاکٹرز نے سندھ میں سروسز معطل کرنے کا عندیہ دے دیا

  ینگ ڈاکٹرز نے سندھ میں سروسز معطل کرنے کا عندیہ دے دیا

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر)چیئرمین ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن سندھ نے دھمکی دی ہے کہ اگر ڈاکٹروں پر تشدد کے واقعات بند نہ ہوئے تو سروسز بھی معطل کرسکتے ہیں۔تفصیلات کے مطابق فزیشن کنسلٹنٹ جناح اسپتال کراچی اور چیئرمین وائی ڈی اے سندھ ڈاکٹر محمد عمر سلطان نے کہا کہ عید کے ایام میں لاک ڈاون میں نرمی کے اثرات سامنے آنا شروع ہوگئے، اب لاک ڈاون کرنے کا کوئی فائدہ نہیں،کم و بیش پورا شہر ایکسپوز ہوچکا ہے۔ڈاکٹر محمد عمر سلطان نے شہر کی ابتر صورت حال کی نشاندہی کرتے ہوئے کہا کہ کراچی کے تمام سرکاری و نجی اسپتالوں میں وینٹی لیٹر اور بیڈ کی گنجائش ختم ہوچکی ہے،ہم نے پہلے ہی کہا تھا کہ لاک ڈاون میں نرمی نہ کریں،اب دعا کا وقت ہے اللہ تعالی سے دعا کریں۔چیئرمین وائی ڈی اے سندھ کا مزید کہنا تھا کہ وینٹی لیٹراور آئسولیشن بیڈ فراہم کرنا ڈاکٹروں کی ذمہ داری نہیں ہے، لواحقین کی جانب سے ڈاکٹروں پر تشدد کرنے سے گریز کیا جائے،ڈاکٹروں پر تشدد کے واقعات بند نہ ہوئے تو سروسز بھی معطل کرسکتے ہیں، اسپتالوں کی صورت حال سے متعلق ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن کا اجلاس بھی طلب کیا ہے،جس میں آئندہ کے لائحہ عمل کا اعلان کریں گے۔ڈاکٹر محمد عمر سلطان کا کہنا تھا کہ حکومت ڈاکٹروں کو تحفظ فراہم نہ کرسکی تو شٹ ڈاون کی طرف بھی جاسکتے ہیں۔فزیشن کنسلٹنٹ جناح اسپتال نے اپنے بیان میں کہا کہ آج بھی لاکھوں شہری گھروں سے نکلے اور ماسک نہیں پہنے ہوئے تھے،ایک ہی علاج ہے گھروں میں رہیں ماسک پہنیں اور فاصلہ رکھیں۔

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -