شادی ہال،ریسٹورنٹ کھولنے کی اجازت دی جائے: ایسوسی ایشن 

شادی ہال،ریسٹورنٹ کھولنے کی اجازت دی جائے: ایسوسی ایشن 

  

لاہور(سٹی رپورٹر) لاہور ریسٹورنٹس یونٹی،لاہور سپر مارکیٹس ایسوسی ایشن اور میرج ہالز ایسوسی ایشن نے کاروبار کھلوانے اور اوقات کار میں اضافے کے لیے لاہور چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کی مدد طلب کی ہے، ریسٹورنٹس کے مالکان اور میرج ہالز ایسوسی ایشن کا مطالبہ ہے کہ ان کے کاروبار کھولے جائیں جبکہ سپر مارکیٹس ایسوسی ایشن نے کاروباری اوقات کار میں اضافے کا مطالبہ کیا ہے۔ لاہور چیمبر کے صدر عرفان اقبال شیخ نے سینئر نائب صدر علی حسام اصغر اور نائب صدر میاں زاہد جاوید احمد کے ہمراہ ریسٹورنٹس یونٹی،لاہور سپر مارکیٹس ایسوسی ایشن اور میرج ہالز ایسوسی ایشنز کے وفود سے ملاقات کی اور ان کے مسائل سے آگاہی حاصل کی۔ لاہور چیمبر کے صدر عرفان اقبال شیخ، سینئر نائب صدر علی حسام اصغر،نائب صدر میاں زاہد جاوید احمد چیئرمین لاہور ریسٹورنٹس ایسوسی یونٹی عامر رفیق اور میرج ہالز ایسوسی ایشن کے چیئرمین میاں محمد الیاس نے اس موقع پر خطاب کیا جبکہ ایگزیکٹو کمیٹی اراکین عامر انوار، چودھری خادم حسین، واصف یوسف و دیگر بھی اس موقع پر موجود تھے۔ اجلاس کے شرکا نے کہا کہ حکومت کاروبار فورا کھولنے کی اجازت دے کیونکہ طویل لاک ڈاؤن نے انہیں بھاری مالی نقصان پہنچایا ہے، اگر کاروبار فورا نہ کھولے گئے تو صورتحال بہت پیچیدہ ہوجائے گی۔ انہوں نے کہا کہ ریسٹورنٹس اور میرج ہالز کی بندش نے نہ صرف اربوں روپے کی سرمایہ کاری داؤ پر لگا دی ہے بلکہ ہزاروں افراد کو بے روزگار کردیا ہے جو فاقہ کشی پر مجبور ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ریسٹورنٹس اور میرج ہالز کے مالکان تمام ایس اوپیز اور حفاظتی اقدامات پر بھرپور عمل درآمد کے لیے تیار ہیں۔ لاہور چیمبر کے صدر عرفان اقبال شیخ نے کہا کہ لاہور چیمبر تمام صورتحال سے اچھی طرح آگاہ ہے اور یہ معاملات اعلی سطح پر اٹھائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ترکی سمیت بہت سے ممالک نے ہوٹل انڈسٹری کھول دی ہے، ہمیں دوسری بیماریوں کی طرح کروناوائرس کے ساتھ ہی زندگی گزارنا ہے لہذا حکومت حفاظتی اقدامات کے ساتھ کاروبار شروع کرنے کی اجازت دے۔ مزید برآں لاہور ریسٹورنٹس یونٹی نے مطالبہ کیا کہ بڑے سرکاری و نیم سرکاری عمارات میں قائم ریسٹورنٹس کو ریلیف دیا جائے، چھوٹے ریسٹورنٹس کے تین ماہ کے سو فیصد یوٹیلٹی بلز جبکہ بڑے ریسٹورنٹس کے پچاس فیصد یوٹیلٹی بلز معاف کیے جائیں، پورا ہفتہ صبح آٹھ سے رات بارہ بجے تک کاروبار کی اجازت دی جائے۔

مزید :

صفحہ اول -