عمران خان مقبول ترین رہنما، آئندہ انتخابات میں بھی کامیابی حاصل کرینگے: فواد چوہدری

عمران خان مقبول ترین رہنما، آئندہ انتخابات میں بھی کامیابی حاصل کرینگے: فواد ...

  

 اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک،آئی این پی)وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات   چوہدری فواد حسین نے کہا ہے کہ عمران خان پاکستان میں مقبول ترین رہنما ہیں،  آئندہ عام انتخابات میں بھی وزیراعظم عمران خان کامیابی حاصل کریں گے،کووڈ 19 کے حوالے سے پاکستان کا ردعمل پوری دنیا میں سب سے بہتر رہا،عوام کو ویکسین لگوانے کے حوالے سے پاکستان دنیا کے صف اول کے 34 ممالک میں شامل ہے۔ہم ویکسی نیشن کے اہداف جلد حاصل کرلیں گے،پاکستان میں میڈیا کو بے پناہ آزادی حاصل ہے،پاکستان دہشت گردی کی لعنت کے خلاف فرنٹ لائن سٹیٹ کی حیثیت سے لڑ رہا ہے،پاکستان میں سوشل میڈیا کی آزادی روکنے کیلئے قوانین منظور کرنے کا تاثر غلط ہے،  گوگل، فیس بک اور دیگر ٹیکنالوجی کمپنیوں کی قدر کرتے ہیں، خواہش ہے کہ وہ پاکستان میں اپنے دفاتر کھولیں، ہم ان کمپنیوں کے ساتھ کاروبار کرنا چاہتے ہیں۔جمعہ کووفاقی وزیر اطلاعات و نشریات   چوہدری فواد حسین نے  برطانوی نشریاتی ادارے  کو دئیے گئے انٹرویو میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم عمران خان پاکستان میں مقبول ترین رہنما ہیں، پاکستان کے عوام نے انہیں ووٹ دیئے اور ان کے پرستار ہیں،آئندہ عام انتخابات میں بھی وزیراعظم عمران خان کامیابی حاصل کریں گے،منتخب حکومت کو کمزور نہ سمجھا جائے، عمران خان نے گزشتہ عام انتخابات میں لاکھوں ووٹ حاصل کئے، عمران خان ایک ایٹمی ملک کے وزیراعظم ہیں، وہ اور ان کی کابینہ اجتماعی فیصلے کرتے ہیں۔ وفاقی وزیر اطلاعات نے کہا کہ کووڈ 19 بحران کے باوجود اس وقت ملک کی شرح نمو 3.94 فیصد ہے، تقریباً 1100 ارب روپے اربن اکانومی سے رورل اکانومی میں منتقل ہوئے،اس سال پاکستان میں چار بمپر فصلیں ہوئیں، کسانوں کی جانب سے بڑی تعداد میں ٹریکٹرز خریدے گئے،کووڈ 19 کے حوالے سے پاکستان کا ردعمل پوری دنیا میں سب سے بہتر رہا۔ وفاقی وزیر اطلاعات نے کہا کہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے صدر نے وبا سے متعلق پاکستان کے اقدامات کو مثالی قرار دیا ہے، جو کووڈ 19 کی صورتحال سے نمٹنے کے لئے ہماری کامیاب حکمت عملی کا اظہار ہے،ملک میں 5.5 ملین افراد کو ویکسین لگائی جا چکی ہے۔ عوام کو ویکسین لگوانے کے حوالے سے پاکستان دنیا کے صف اول کے 34 ممالک میں شامل ہے۔ہم ویکسینیشن کے اہداف جلد حاصل کرلیں گے۔ کووڈ 19 کی صورتحال سے نمٹنے کیلئے پاکستان کی کامیابی جزوی لاک ڈاؤن کی حکمت عملی ہے،پاکستان میں خطے کے کسی دوسرے ملک کے مقابلے میں صورتحال کافی بہتر ہے،پاکستان میں میڈیا کو بے پناہ آزادی حاصل ہے، آزادی اظہار رائے ایک بنیادی اور جمہوری حق ہے جس کی آئین پاکستان میں ضمانت دی گئی ہے۔ چوہدری فواد حسین نے کہا کہ پاکستان میں بی بی سی سمیت تقریباً 43 بین الاقوامی چینلز، 112 مقامی پرائیویٹ چینلز، 258 ایف ایم چینلز اور 1569 پرنٹ پبلی کیشنز موجود ہیں،اتنے بڑے پیمانے پر میڈیا کی موجودگی میں کیسے میڈیا کو دبایا جا سکتا ہے؟ بی بی سی پاکستان میں سب سے زیادہ دیکھے جانے والا بین الاقوامی چینل ہے، حکومت نے کبھی بھی اس کی ٹرانسمیشن میں رکاوٹ نہیں ڈالی۔ بی بی سی اردو کو مقامی قوانین پر پیروی کے ساتھ اپنے پروگرام نشر کرنے کی اجازت دی جائے گی۔ چوہدری فواد حسین نے کہا کہ اسد طور پر حملے کا نوٹس لیا، سینئر پولیس آفیسر اس کیس کی تحقیقات کر رہے ہیں واقعہ کے ذمہ داروں کو گرفتار کیا جائے گا،کسی ٹھوس ثبوت کے بغیر کسی ادارے پر  الزام عائد کرنا بلا جواز ہے،انفرادی واقعات دنیا میں ہر جگہ پیش آتے ہیں،پاکستان دہشت گردی کی لعنت کے خلاف فرنٹ لائن اسٹیٹ کی حیثیت سے لڑ رہا ہے۔ وفاقی وزیراطلاعات نے کہا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کے شہریوں نے اپنی جانوں کی قربانی دی،دہشت گردی صرف صحافیوں تک محدود نہیں رہی، سابق وزیراعظم بے نظیر بھٹو بھی دہشت گردی کے حملے میں جاں بحق ہوئیں،تقریباً 70 ہزار شہریوں نے دہشت گردی کے خلاف اپنی جانوں کی قربانی دی،وزیراعظم عمران خان کی قیادت میں موجودہ حکومت کے اقتدار میں آنے کے بعد صحافیوں پر حملوں کے واقعات کم ہوئے ہیں،پاکستان میں سوشل میڈیا کی آزادی روکنے کیلئے قوانین منظور کرنے کا تاثر غلط ہے، نفرت انگیز تقاریر عالمگیر سطح پر تسلیم شدہ حقیقت ہیں جن پر قابو پایا جانا چاہئے، تمام ریاستیں اور تنظیمیں اس بات کی پابند ہیں کہ نفرت انگیز تقاریر کی اجازت نہ دی جائے۔ وفاقی وزیر اطلاعات نے کہا کہ گوگل، فیس بک اور دیگر ٹیکنالوجی کمپنیوں کی قدر کرتے ہیں، خواہش ہے کہ وہ پاکستان میں اپنے دفاتر کھولیں، ہم ان کمپنیوں کے ساتھ کاروبار کرنا چاہتے ہیں، ہم دنیا کے لئے ان کے تعاون کو تسلیم کرتے ہیں۔ 

انٹرویو

 اسلام آباد (سٹاف رپورٹر)وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری اور وفاقی وزیر انسانی حقوق ڈاکٹر شیریں مزاری نے اقوام متحدہ کی ہیومن رائٹس کمیٹی کی جانب سے فلسطین کے حق میں قرارداد کی منظوری کو بڑی کامیابی قرار دیتے ہوئے کہاہے کہ قرارداد کی رو سے ایک کمیشن تشکیل پائیگا جس کو یو این جنرل اسمبلی کے صدر مکمل سہولیات فراہم کریگا،امریکہ اور دیگر ممالک جو اسرائیل کو ہتھیار فراہم کرتے ہیں،ان کو ان ہتھیاروں کو فلسطینیوں کیخلاف استعمال نہ کرنا یقینی بنانا ہو گا،ایسا کرنا بین الاقوامی انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے،کمیشن فلسطینیوں کو جبری اپنی زمینوں سے بے خل کرنے سے روکے گا،پاکستان اور او آئی سی کو اس طرح کی قرارداد کشمیر پر بھی پیش کرنی چاہیے۔ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر اطلاعات نے کہاکہ یو این کی ہیومن رائٹس کمیٹی نے فلسطین کے حق میں قررداد منظور کی،پاکستان نے فلسطین کے معاملے پر بڑی کامیابی ملی،عمران خان کی قیادت میں کامیابی ملی۔ڈاکٹر شیریں مزاری نے کہاکہ ہیومن رائٹس کونسل جنیوا میں منظور ہوئی،پہلے بھی قرارددیں منظور ہوئیں مگر اس کی الگ اہمیت ہے،انسان حقوق کے علمبردار کچھ ممالک کے کچھ علمبردار ممالک نے قرارداد کی مخالفت کی،پاکستان نے او آئی سی کے تعاون سے قررداد منظور ہوئی،اس قرارداد میں امریکہ کو اسرائیل کیساتھ تعلقات میں انسانی حقوق کی بنیادوں کو ملحوظ خاطر رکھنے پر زور دیا،اس قرارداد کی رو سے ایک کمیشن تشکیل پائیگا جس کو یو این جنرل اسمبلی کے صدر مکمل سہولیات فراہم کریگا،امریکہ اور دیگر ممالک جو اسرائیل کو ہتھیار فراہم کرتے ہیں ان کو ان ہتھیاروں کو فلسطینیوں کیخلاف استعمال نہ کرنا یقینی بنانا ہو گا،ایسا کرنا بین الاقوامی انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے۔ انہوں نے کہاکہ کمیشن فلسطینیوں کو جبری اپنی زمینوں سے بے خل کرنے سے روکے گا۔ انہوں نے کہاکہ اسرائیل کی نسل پرست پالیسی کے خلاف اقدامات کریگا،کمیشن اس بات کو یقینی بنائے گا کہ اسرائیل کسی بھی طور فلسطینیوں کو ان کی زمینوں سے جبری بے دخل نہیں کریگا۔ انہوں نے کہاکہ اسرائیل نے اسلام کی مقدسات ہر حملہ کیا ہے،پاکستان اور او آئی سی کو اس طرح کی قرارداد کشمیر پر بھی پیش کرنی چاہیے۔ 

فواد چوہدری

مزید :

صفحہ اول -