ہائیکورٹ نے ضمانتی مچلکے کم کرنے کا نیا قانونی اصول طے کردیا

ہائیکورٹ نے ضمانتی مچلکے کم کرنے کا نیا قانونی اصول طے کردیا

  

  

 لاہور(نامہ نگار خصوصی) لاہور ہائیکورٹ کے مسٹر جسٹس طارق سلیم شیخ نے ضمانتی مچلکے زیادہ ہونے کے باعث ملزم کے رہا نہ ہونے کا نوٹس لیتے ہوئے ضمانتی مچلکے کم کرنے کا نیا قانونی اصول طے کردیا فاضل جج نے قرار دیا کہ ضمانتی مچلکے بلاجواز،زیادہ اور سخت نہیں ہونا چاہئے، فاضل جج نے 10 صفحات کا تحریری فیصلہ جاری کردیا  تحریری فیصلہ میں کہا گیا ہے کہ قانون کا فلسفہ ملزم کی مالی حالت پر مچلکے کا متقاضی ہے، سپیشل جج سنٹرل نے کیس میں سختی کی 15 لاکھ کے ضمانتی مچلکے مقرر کیے جبکہ ہائیکورٹ نے مچلکوں کی رقم ایک لاکھ روپے کی،فاضل جج نے اپنے فیصلے میں لکھا کہ کچھ بنیادی حقوق کیس کی کارروائی سے منسلک ہیں،کیس کا ٹرائل تیز کیاجانا چاہئے،عدالت نے ملزموں کو ضمانت دینے کیلئے 4 نکات بھی طے کر دیئے فاضل جج نے قرار دیا کہ التیں ملزم کے سابق ریکارڈ کے مطابق ضمانتی مچلکے مقرر کریں،جسٹس طارق سلیم شیخ نے اپنے فیصلے میں لکھا کہ ضمانت کا نظریہ 399 برس قبل از مسیح سے شروع ہوا۔

اصول طے 

مزید :

صفحہ آخر -