جولائی  سے مہنگائی میں کمی آنا شرو ع ہو جائے گی: شوکت ترین 

جولائی  سے مہنگائی میں کمی آنا شرو ع ہو جائے گی: شوکت ترین 

  

  اسلام آباد(این این آئی)وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا ہے کہ جولائی سے مہنگائی میں کمی آنا شروع ہوجائے گی،حکومت ٹیکنالوجی کے استعمال سے ٹیکس بیس بڑھائے گی، آئی ایم ایف سے ہماری گفتگو جاری ہے،سٹیٹ بینک اور آئی ایم ایف سے کہا ہم آپ کا ہدف پورا کریں گے ٹیکس نہیں لگائینگے انٹرویومیں وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا کہ گندم، دالیں درآمد کرنے کی وجہ سے اشیاء کی قیمتیں زیادہ ہیں  مہنگائی کی ایک وجہ کسان اور ہول سیل مارکیٹ میں قیمتوں کا فرق بھی ہے عالمی مارکیٹ میں فوڈ آئٹمز کی قیمتوں میں کمی کا اثر پاکستان میں بھی آئے گا شوکت ترین نے کہا کہ حکومت آئندہ بجٹ نئے ٹیکسز لگانے کا ارادہ نہیں رکھتی بلکہ حکومت ٹیکنالوجی کے استعمال سے ٹیکس بیس بڑھائے گی آئی ایم ایف سے ہماری گفتگو جاری ہے اسٹیٹ بینک اور آئی ایم ایف سے کہا ہم آپ کا ہدف پورا کریں گے لیکن ٹیکس پر ٹیکس نہیں لگائیں گے اس وقت وہ چیز کریں گے جو ہمارے مفاد میں ہے، میری کوشش ہے کہ کوئی بھی زیادہ ٹیکس نہ دے انہوں نے کہا کہ کورونا کی صورتحال نے ٹیکس وصولیوں کو متاثر کیا ہے شوکت ترین نے بتایا کہ حفیظ شیخ اور وزیراعظم کی پالیسی کی وجہ سے معیشت کا گراف اوپر گیا، جی ڈی پی گروتھ کا کریڈیٹ حفیظ شیخ کو بھی جاتا ہے، آئی ایم ایف کا پروگرام بہت سخت تھا جس کی وجہ سے معیشت کا بیڑا غرق ہوا ہمارے پاس کوئی راستہ نہیں تھا اور آئی ایم ایف نے ہمارے ساتھ زیادتی کی۔دوسری جانب وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہاہے کہ صنعتوں پر کسی بھی نئے ٹیکس یا ریلیف کا بغور جائزہ لینے کے بعد قدم اٹھائینگے وزیر خزانہ شوکت ترین کی زیر صدارت بیوریج انڈسٹری سے متعلق اجلاس ہوا جس میں وزیر خزانہ کو انڈسٹری کے نمائندوں کی گزشتہ 9 سال کی کارکردگی پر بریفنگ دی گئی۔کورونا وباء کے دوران روزگار اور ریونیو بڑھانے میں بیوریج انڈسٹری کے کردار پر بھی روشنی ڈالی۔بیوریج انڈسٹری کے نمائندگان نے بجٹ سے متعلق اپنی تجاویز بھی پیش کیں۔ 

شوکت ترین 

مزید :

صفحہ اول -