سخاکوٹ ،پیسکو ملازمین کا مطالبات کے حل تک ہڑتال کا اعلان

سخاکوٹ ،پیسکو ملازمین کا مطالبات کے حل تک ہڑتال کا اعلان

  



سخاکوٹ (نمائندہ پاکستان ) واپڈا پیسکو ڈویژن درگئی کے ملازمین نے 15فی صد میڈیکل الاؤنس اور یو اے ای الاؤنس نہ ملنے کے خلاف بھرپور احتجاج کرنے اور مکمل ہڑتال کااعلان کردیا۔آف ڈے ویجز اور ٹی اے بلز فوری دئیے جائیں۔سٹاف انتہائی کم ہے جس سے ملازمین پر کام کی دباؤ بہت زیادہ ہے فوری بھرتی کرنے کا مطالبہ کردیا۔ تفصیلات کے مطابق واپڈا پیسکو ڈویژن درگئی کے چھ سب ڈویژنوں، بشمول ڈویژن آفس، آراو آفس اور گریڈ سٹیشن کے یونین عہدیداروں کا ایک بہت بڑا اور ہنگامہ خیز اجلاس زیرصدارت ڈویژنل چیئرمین جاویدخان بمقام میٹینگ ہال بجلی گھر منعقد ہوا جس میں طارق عظیم، شیر محمد خان، گل شیرین، عصمت اللہ خان، ودود خان، ملک نورزاد خان، حیات محمد خان، ابراہیم خان، احسان سہیل خان،ہاشم خان، محمدنعیم خان، رفیع اللہ خان، حیات خان استاد، لائق زادہ خان، نثار خان، نیازعلی خان،ارشاد خان، اعجاز خان، وسیم خان، فرمان اللہ خان سمیت دیگرہائیڈرو یونین کے عہدیداروں نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔ اجلاس میں واپڈا پیسکو کے جاری آفس آرڈر جس میں ہیلتھ کئیر پالیسی کااعلان کیاگیاہے پر سخت آفسوس اور برہمی کااظہار کیاگیا اور کہاگیا کہ درگئی میں موجود ڈسپنسری پیسکو کا نہیں بلکہ واپڈا کا ہے جہاں سر درد کی دوائی تک دستیاب نہیں، ڈیلیوری ، ایمرجنسی، ایکسیڈنٹ سمیت دیگر دل، گردے،جگر کے سپیشلسٹ تک موجود نہیں ، ایمبولینس نہیں ہے، ایسے میں جب سہولیات موجود نہیں تو کس قانون اور ضابطے کے تحت سب ملازمین کو 15فی صد میڈیکل الاؤنس نہیں دیا جارہا،پہلے یواے ای الاؤنس کا اعلان کیا گیا جس کو بھی انہی لوگوں نے دبائے رکھا ہے اور ملازمین کو نہیں دیاجارہا۔ اجلاس مین متفقہ فیصلہ کیاگیا کہ پہلے مرحلے میں صوبائی یونین کے ساتھ ملاقات کر کے اپنے تحفظات ، مشکلات اور ہمارے ساتھ ہونے والے زیادتیوں سے آگاہ کیا جائے گادوسرے مرحلے میں پشاور میں بھرپور احتجاج ریکارڈ کیا جائے گا اور بعد ازاں ڈویژن کی سطح پر مکمل ہڑتال کی جائی گی۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ ڈویژن درگئی کے پیسکو آپریشن ملازمین کو فوری طور پر15فی صد میڈیکل الاؤنس ، یو اے ای لاؤنس، آف ڈے ویجز اور ٹی اے بلز ہر ماہ ادائیگی یقینی بنایاجائے، ملازمین کے بچوں کو بھرتی کیاجائے بصورت دیگر ہم ہرقسم کے سخت سے سخت احتجاج پر مجبور ہونگے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر