بھتہ کے نام پر چھوٹے ٹرانسپورٹرز کو تنگ کرنا قابل مذمت ہے،امیر العظیم

بھتہ کے نام پر چھوٹے ٹرانسپورٹرز کو تنگ کرنا قابل مذمت ہے،امیر العظیم

  



لاہور(نمائندہ خصوصی )امیرجماعت اسلامی صوبہ وسطی پنجاب امیر العظیم نے کہاہے کہ صوبہ پنجاب میں بالخصوص پاکپتن،لاہور اور دیگر اضلاع میں ناقص امن وامان کی صورتحال اور جرائم پیشہ عناصر کی جانب سے چھوٹے ٹرانسپوٹرز سے بھتہ لیناتشویش ناک اور لمحہ فکریہ ہے ۔ ضلع پاکپتن سمیت دیگر اضلاع میں بھتہ کے نام پر چھوٹے ٹرانسپورٹرز کو تنگ کرنا قابل مذمت ہے ۔ایسے جرائم پیشہ عناصر کی پشت پناہی ہر دور کی سیاسی قیادتیں اور پولیس میں موجود کالی بھڑیں کرتی رہی ہیں۔حکومت ٹرانسپورٹرزسے بھتہ وصولی کا فوری نوٹس لے ۔

پولیس اور ضلعی انتظامیہ کی طرف سے اس کی روک تھام کے لئے کسی قسم کے ٹھوس اقدامات نہیں کئے جا رہے،جس کے باعث عوام میں شدیدتشویش پائی جاتی ہے ۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روزپاکپتن میں اجتماع سے خطاب اور لاہور میں عوامی وفود سے گفتگوکرتے ہوئے کیا ۔انہوں نے کہا کہ آئے روزلاکھوں روپوں کے ڈاکے،چوریاں اور قتل وغارت گری کی خبریں شہ سرخیوں کی صورت میں اخبارات میں آتی رہتی ہیں مگر قانون نافذکرنے والے ادارے،سیکیورٹی ایجنسیاں اور پولیس صوبے میں بڑھتی ہوئی جرائم کی شرح کوروکنے میں پوری طرح ناکام ہوچکے ہیں جوکہ حکمرانوں کی گڈگورننس پر سوالیہ نشان ہے۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ صوبائی حکومت جرائم کوکنٹرول کرنے کے لئے فوری عملی اقدامات کرے۔تھانے جرائم پیشہ عناصر کی آماہ جگاہ بن چکے ہیں۔انہوں نے کہا کہ پوراصوبہ لاقانونیت کی بھینٹ چڑھ چکا ہے۔رشوت خوری کے باعث اصل حق دار کو انصاف ملنا تو درکنارشنوائی تک نہیں ہوتی۔صوبے بھر کے عوام کا مطالبہ ہے کہ حکومت امن وامان کویقینی بنائے۔انہوں نے کہاکہ عوام کو کسی قسم کا کوئی ریلیف میسر نہیں ،جب تک تھانہ کلچر میں اصلاحات نہیں لائی جاتیں فرسودہ نظام کا خاتمہ ممکن نہیں۔عوام کو تحفظ فراہم کرنا حکومت وقت کی اولین ذمہ داری ہے مگر بدقسمتی سے اس حوالے سے اقدامات نہیں کیے جارہے۔امیر العظیم نے مزیدکہا کہ لوگوں کو جرائم پیشہ عناصر کے رحم وکرم پر چھوڑدیا گیا ہے۔یوں محسوس ہوتاہے کہ صوبے میں میرٹ نام کی کوئی چیز نہیں ہے۔کرپٹ عناصر کومنظم پلاننگ کے تحت اہم اداروں میں بھرتی کیاجارہا ہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 4


loading...