نوجوان پولیو ویکسین کے خلافچلنے والی مہم روکنے کیلئے آگے آئیں،ڈاکٹر منیر

نوجوان پولیو ویکسین کے خلافچلنے والی مہم روکنے کیلئے آگے آئیں،ڈاکٹر منیر

  



لاہور( جنرل رپورٹر)قومی انسداد پولیو پروگرام کے زیراہتمام ورکشاپ کے شرکا نے زور دیا ہے کہ سوشل میڈیا پر پولیو ویکسین مخالف مہم کی روک تھام کے لئے نوجوان صارفین کو آگے آنا چاہیئے۔ ورکشاپ سے خطاب میں پنجاب ایمرجنسی آپریشنز سنٹر کے کو آرڈینیٹر ڈاکٹر منیر احمد نے اپنے کلیدی خطاب میں کہا کہ سوشل میڈیا پر وہ پراپیگنڈہ زیادہ قابل مذمت ہے جو ’نامعلوم ذرائع‘ سے آتا ہے۔

افسوس ہر بار جب بھی انسداد پولیو مہم شروع کی جاتی ، ایک منظم مخالفانہ مہم بھی سوشل میڈیا پر سر اٹھا لیتی ہے۔ گلوبل ویلج کے اس دور میں نوجوان’ نیٹ یوزرز ‘کو اپنا کردار ادا کرنا ہوگا تاکہ ہم اپنی آئندہ نسلوں کو پولیو کی لعنت سے محفوظ رکھ سکیں۔ انہوں نے اس بات پر اطمینان کا اظہار کیا کہ پاکستان 2019میں پولیو سے پاک ملک بننے کے قریب پہنچ چکا ہے۔ اس منزل کے حصول میں سیاسی عزم اور عالمی امدادی تنظیموں نے بنیادی کردار ادا کیا ہے تاہم اس نازک مرحلے پر ہمیں پھونک پھونک کر قدم رکھنا ہوگا۔ سوشل میڈیا پر ہم سب کو منفی مہم کا مقابلہ کرنا ہوگا۔ بالخصوص نامعلوم ذرائع سے آنے والی بے سروپا باتوں کا توڑ نکالنا ہوگا۔ اس موقع پرصدرروٹری کلب پاکستان عزیز میمن نے نوجوان صارفین انٹرنیٹ سے اپیل کی کہ وہ رضا کارانہ طور پر منفی پراپیگنڈے کا جواب دیں ۔ پاکستان کو پولیو سے پاک کرنے کے لئے مشنری جذبے کے ساتھ کام کرنا ہوگا۔ پولیو وائرس سے معذوری کا شکار ہونے والی خاتون سیدہ امتیاز فاطمہ اور انسداد پولیو مہم کی سرگرم حامی نے کہا کہ بچو ں کو ہر بار ویکسین پلانی ضروری ہے کیونکہ اگر ایک علاقے میں پولیو کا وائرس موجود ہو تو دیگر بچے با آسانی نشانہ بن سکتے ہیں۔ ورکشاپ کے شرکا نے ایک مہم پر بھی دستخط کر کے اس عزم کا اظہار کیا کہ وہ پولیو مکاؤ مہم کامیاب بنانے اور منفی سوشل میڈیا مہم روکنے میں ہاتھ بٹائیں گے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1


loading...