ڈاکٹر اجمل نے خود کو بچانے کیلئے پیلتھ کیئر کمیشن کے بورڈ آف کمشنر ز میں پھوٹ ڈلوائی

ڈاکٹر اجمل نے خود کو بچانے کیلئے پیلتھ کیئر کمیشن کے بورڈ آف کمشنر ز میں پھوٹ ...

  



لاہور( جاوید اقبال)پنجاب ہیلتھ کئیر کمیشن کے بورڈ آف کمشنرز میں لڑائی کی اصل کہانی سامنے آ گئی, بورڈ میں لڑائی اور سازش کا مرکزی کردار سی ای او چیف آپریٹنگ آفیسر ڈاکٹر اجمل بنے، سابق بورڈ آف کمشنرز نے موجودہ سی ای او ڈاکٹر اجمل کی تعیناتی کو غیر قانونی قرار دیدیا اور پنجاب ہیلتھ کئیر کمیشن کے اصل سر براہ جو بورڈ کے قوانین میں چیف ایگزیکٹو آفیسر ہیں کی پوسٹ تشہیر کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے موجودہ سی ای او کو فارغ کرنے کا بھی حکم جاری کیا تو ڈاکٹر اجمل نے خود کو بچانے کیلئے سابق چیئرمین بورڈ جسٹس (ر) عامر رضا کو ڈھال کے طور پر استعمال کیا اور بورڈ کے رکن حسین نقی اور دیگر ممبران کے خلاف انہیں بھڑکا دیا تاکہ بورڈ ٹوٹ جائے اور انہیں فارغ کرنے کیلئے بورڈ کی طرف سے دئیے گئے احکامات کی کوئی حیثیت نہ رہے اور وہ پھر بچ جائیں ۔ذرائع نے بتایا کہ موجودہ حکومت کی طرف سے پنجاب ہیلتھ کئیر کمیشن کیلئے9 رکنی بورڈ آف کمشنرز تشکیل دیا ،بورڈ نے اپنا چیئرمین نامزد کرنے کیلئے فراغت سے چند روز قبل اجلاس طلب کیا جس کیلئے 9کمشنرز میں سے اکثریت نے ڈاکٹر عظیم الدین زاہد کو نیا چیئرمین منتخب کر لیا ۔قبل ازیں اجلاس میں پانچ کمشنرز بریگیڈئر (ر) ثمینہ نقوی ‘ ڈاکٹر عظیم الدین زاہد ،حسین نقی ،عنبرین عرفان اور اعجاز بھٹی نے سابق بورڈ کے چیئرمین جسٹس (ر) عامر رضا کے خلاف تحریک عدم اعتماد جمع کروادی۔ اس دوران بورڈ کے اجلاس میں سابق چیئرمین عامر رضا بھی پہنچ گئے اور اطلاع پا کر کہ ان کے خلاف تحریک عدم اعتماد آ گئی ہے وہ اجلاس سے ناراض ہو کر چلے گئے جبکہ انہیں منانے کیلئے حسین نقی اور دیگر ممبران پیچھے گئے مگر وہ واپس نہ آئے جس کے بعد انہوں نے بورڈ کو درخواست دی کہ ان کے خلاف تحریک اعتماد نہ لائی جائے وہ مستعفی ہونے کیلئے تیار ہیں ۔ذرائع کے مطابق اس واقعہ سے قبل نئے بورڈ نے قرار داد منظور کی کہ کمیشن کے قوانین کے مطابق کمیشن کے سر براہ کا حقیقی عہدہ چیف ایگزیکٹو آفیسر(سی ای او)ہے مگر ڈاکٹر اجمل نے سابق حکومت سے ملی بھگت کرکے اس عہدے کو غیر قانونی طور پر سی ای او میں تبدیل کروالیا اور غیر قانونی طور پر کمیشن کے سر براہ بن گئے۔ نئے بورڈ نے اپنے فیصلے میں تحریر کیا کہ ڈاکٹر اجمل کی تقرری غیر قانونی ہے اس کو ختم کیا جائے اور آئندہ اجلاس سے قبل نئے سی ای او کی بھرتی کیلئے در خواستیں طلب کی جائیں ۔بورڈ نے یہ بھی سفارش کی کہ موجودہ سی ای او پونے گیارہ لاکھ ماہانہ تنخواہ لیتے رہے ہیں جبکہ زائد تنخواہیں وصول کرنیو الوں سے سپریم کورٹ ریکوری کا حکم دے چکی ہے لہٰذا ڈاکٹر اجمل سے 6 سال کی ریکوری کی جائے ۔بورڈ نے یہ بھی تجویز کیا کہ ڈاکٹر اجمل اس وقت بھی 6 لاکھ48 ہزار روپے ماہانہ تنخواہ وصول کررہے ہیں ان سے وہ بھی واپس لی جائے ۔نئے بورڈ نے اپنی سفارش میں یہ بھی لکھا کہ سی ای او نے اپنے اہل خانہ کو نوازنے کیلئے مبینہ بھارتی نژاد بیوی کو کنسلٹنسی کے کام دئیے اور انہیں اس مد میں5 سے 6 لاکھ روپیہ ادا کیا وہ بھی وصول کئے جائیں ۔ذرائع کے مطابق جب موجودہ سی ای او کو نئے بورڈ کے مذکورہ احکامات کی اطلاع ملی توانہوں نے حسین نقی اور سابق چیئرمین جسٹس (ر) عامر رضا میں لڑائی کروادی اور انہیں نئے بورڈ کے خلاف عدالت سے رجوع کرنے کا مشورہ دیا جس پر وہ عدالت پہنچ گئے اور آخر کار معزز عدالت نے سی ای او کے خلاف سفارشات تیار کرنیو الا بورڈ ہی تحلیل کردیا ۔کمیشن کے ذرائع اور سابق ممبران کا کہنا ہے کہ بورڈ کو تحلیل کروانے میں مرکزی کردار موجودہ سی ای او نے ادا کیا جس کا مقصد خود کو بچانا تھا جس میں وہ کامیاب رہے ۔اس حوالے سے ہیلتھ کئیر کمیشن کے سی ای او ڈاکٹر اجمل سے بات کی گئی تو انہوں نے کہا کہ اپنے اوپر لگائے جانے والے الزامات سامنے آنے پر جواب دوں گا ۔ڈاکٹر اجمل نے کہا کہ میں نے تحلیل ہونیو الے بورڈ کے خلاف کوئی سازش کی نہ ہی حسین نقی اور جسٹس (ر) عامر رضا کے درمیان لڑائی کا باعث بنا۔میری تقرری قانونی ہے اور سابق حکومت نے جو پیکیج دیا وہی وصول کرتا رہا۔

پنجاب ہیلتھ کئیر کمیشن

مزید : صفحہ اول