مظفر گڑھ‘ ایس ایچ او تھانہ سٹی کا شادی والے گھر پر دھاوا ‘ خواتین گرفتار

مظفر گڑھ‘ ایس ایچ او تھانہ سٹی کا شادی والے گھر پر دھاوا ‘ خواتین گرفتار

  



مظفر گڑھ ‘ خانگڑھ ‘ جتوئی ( نامہ نگار ‘ نمائندہ خصوصی ‘ نمائندہ پاکستان ) تھانہ سٹی مظفرگڑھ کے ایس ایچ او کی طرف سے قانون شکنی کرتے ہوئے شادی والے گھر پر دھاوا بول کر خواتین سے بدتمیزی کرتے ہوئے انہیں گرفتار کرلیا ‘ کوریج کرنے والے صحافی سے بدتمیزی اور کیمرے چھیننے کی کوشش,(بقیہ نمبر40صفحہ7پر )

اہلکاروں ‘ صحافی کے خلاف مقدمہ درج کردیا جس پر ضلع بھر کی صحافتی تنظیموں اور پریس کلبز کے عہدیداروں میں تشویش کی لہر پھیل گئی اور صحافی منصور پاشا کے خلاف جھوٹے مقدمہ کے اندراج پر شدید احتجاج کیا اور پولیس کے چھاپے کے دوران خواتین کے ساتھ نازیبا سلوک کی ویڈیو بنانے کی پاداش میں صحافی کے خلاف مقدمہ درج کرنے پر صحافیوں کے وفد نے ڈسٹرکٹ پریس کلب مظفرگڑھ کے صدر نعیم احمد خان کی قیادت میں ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر مظفرگڑھ عمران کشور سے ملاقات کرکے انہیں ایس ایچ او تھانہ سٹی عبدالکریم کھوسہ کی طرف سے صحافی کے ساتھ بدتمیزی اور پولیس گردی کرتے ہوئے بغیر کسی لیڈی کانسٹیبل کے خواتین کو بدسلوکی کے ساتھ گرفتار کرتے ہوئے بنائی گئی ویڈیو بھی پیش کی گئی. اس موقع پر ڈسٹرکٹ پریس کلب کے صدر نعیم احمد خان, جنرل سیکرٹری فاروق شیخ, سنئیر نائب صدر رانا نذر محمد, حاجی اصغر پتافی, شہزاد پرنس, رضوان قریشی, نصراللہ لغاری, عزیز پتافی, محمد علی, نذر جتوئی, ملک تحسین بدھ, رانا عبدالمنان, رانا واجد علی, ریحان قریشی اور دیگر صحافیوں نے صحافتی ذمہ داری کی انجام دہی کے دوران صحافی منصور احمد پاشا کے ساتھ بدتمیزی کرنے اور جھوٹے مقدمہ میں شامل کرنے پر شدید تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ منصور پاشا کے خلاف جھوٹے مقدمہ کا اندراج آزادی صحافت پر قدغن ہے جس کو ہرگز برداشت نہیں کیا جائیگا. جبکہ صحافی منصور پاشا کا شادی کی تقریب سے بھی کوئی واسطہ نہ تھا اور نہ ہی انہوں نے اس تقریب کے دوران پولیس کاروائی کو روکنے کی کوشش کی اس کے باوجود ایس ایچ او تھانہ سٹی عبدالکریم کھوسہ نے صحافتی ذمہ داری کی انجام دہی کرتے ہوئے پولیس گردی کی ویڈیو بنانے کی پاداش میں جان بوجھ کر صحافی کے خلاف جھوٹا مقدمہ بنایا گیا ہے جو پولیس گردی کی ایک اور بدترین مثال ہے انہوں نے کہا کہ ضلع بھر کی صحافتی تنظیموں اور پریس کلبز کے عہدیداروں سے رابطہ کرکے صحافی کے خلاف پولیس گردی کے اس واقعہ پر احتجاجی متفقہ لائحہ عمل بنایا جائیگا. جبکہ الیکٹرانک میڈیا ایسوسی ایشن ضلع مظفرگڑھ کے عہدیداروں نے کہا کہ تھانہ سٹی مظفرگڑھ کے ایس ایچ او کی طرف سے اختیارات کا ناجائز استعمال کرتے ہوئے جھوٹے مقدمہ میں شامل کرنے پر تمام صحافی برادری کے ساتھ بھر پور احتجاج کرینگے. دوسری طرف جتوئی, علی پور اور کوٹ ادو پریس کلبز کے عہدیداروں نے کہا کہ ایس ایچ او تھانہ سٹی عبدالکریم کھوسہ کی طرف سے صحافی کو فرائض کی انجام دہی سے روکنے اور جھوٹے مقدمہ میں شامل کرنے پر ضلع کچہری چوک پر دھرنا دینگے جس میں ضلع بھر سے صحافی برادری شریک ہوگی. علاوہ ازیں تھانہ سٹی مظفرگڑھ کے ایس ایچ او عبدالکریم کھوسہ کی طرف سے صحافی کے ساتھ بدتمیزی کرنے اور جھوٹے مقدمہ میں شامل کرنے پر تمام صحافیوں نے ضلع پولیس کی طرف سے بنائے گئے سوشل میڈیا وٹس اپ گروپ سے بھی احتجاج کرتے ہوئے لیفٹ کرکے گروپ کو چھوڑ دیا ہے۔

دھاوا

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...