راہداری کھولنا سفارتی دہشت گردی ،بھارتی میڈیا کی زہرافشانی،یہ پاک بھارت مذاکرات کی بحالی نہیں :سشما سوراج،امن کی کوشش پراپیگنڈے کی نذر نہ کی جائے :ترجمان پاک فوج

راہداری کھولنا سفارتی دہشت گردی ،بھارتی میڈیا کی زہرافشانی،یہ پاک بھارت ...

  



اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک ،آن لائن)پاکستان کی جانب سے امن کا ہاتھ بڑھانا حسب معمول بھارتی حکومت اورمیڈیا کے مزاج پر بے حد گراں گزرا، بھارتی میڈیا نے کرتار پور راہداری کھولنے کو سفارتی دہشت گردی کا نام دے دیا۔دنیا بھر میں آباد سکھ برادری کے لیے پاکستان کی جانب سے کرتار پور راہداری کھولنے سے بھارت بوکھلا گیا۔ بھارتی میڈیا نے اس بات کو قطعا نظر انداز کرتے ہوئے کہ سنگ بنیاد رکھنے کی تقریب میں بھارتی وزرا بھی شریک ہیں، پاکستان کے اس احسن اقدام کو سفارتی دہشت گردی قرار دے دیا۔ اپنی فطری تنگ نظری کے باعث وہ اس اقدام کی تعریف بھی نہیں کر پا رہا اور حسب معمول بھارتی میڈیا نے ایک بار پھر نفرت کا پرچار شروع کردیا ہے.بھارتی میڈیا نے کرتارپور کوریڈور کے کھولنے کے اعلان کوکو پاکستان کی جانب سے سکھ کمیونٹی کے جذبات کو مشتعل کرنے کا بہانہ قراردیدیا۔ بدھ کو پاکستان نے تاریخی اقدام اٹھاتے ہوئے کرتارپور کوریڈور کا افتتاح کیا تاہم بھارتی میڈیا نے اس عمل کا خیر مقدم کرنے کی بجائے شدید تنقید کا نشانہ بنایا۔ بھارتی اخبار انڈیا ٹوڈے نے اپنے ایک مضمون میں کہا کہ پاکستان کرتارپور کوریڈور کو خالصتان کی تحریک کیلئے استعمال کرنا چاہتا ہے، ایسا امکان موجود ہے کہ یہ کوریڈور سکھوں کے جذبات کو مشتعل کرے گااور خالصتان کی تحریک کو ہوا دینے کا باعث بنے گا۔ اخبار نے الزام عائد کیا کہ پاکستان خالصتان کی تحریک کو ہوا دیتا آیا ہے، حالانکہ بھارت میں اس تحریک کے حوالے سے کوئی بات نہیں ہوتی،پاکستان میں متعدد گوردوارے خالصتان کی تحریک کو ہوا دینے کیلئے استعمال ہو رہے ہیں اور اس حوالے سے گوردواروں میں پمفلٹس بھی پائے گئے ہیں جن میں سکھ کمیونٹی کو 2020میں خالصتان کیلئے ریفرنڈم کرنے پر اکسایا گیا ہے۔دریں اثنابھارتی وزیر خارجہ سشما سوراج نے ایک طرف تو کرتارپور کوریڈور کے سنگ بنیاد رکھے جانے کو 'تاریخی دن' قرار دیا، وہیں اپنی روایتی ہٹ دھرمی برقرار رکھتے ہوئے یہ بھی واضح کردیا کہ کرتار پور راہداری کا مطلب یہ نہیں کہ پاک بھارت دوطرفہ مذاکرات شروع ہوجائیں گے۔ہندوستان ٹائمز کی ایک رپورٹ کے مطابق سشما سوراج کا کہنا تھا کہ 'نہ ہم سارک میں جائیں گے اور نہ پاکستان سے مذاکرات کریں گے'۔ان کا کہنا تھا کہ کرتارپور راہداری کے بھارتی حکومت کے دیرینہ مطالبے پر پاکستان نے اب مثبت ردعمل دیا ہے، تاہم کرتار پور بارڈر سے آمدو رفت کے لیے ویزا ہوگا یا نہیں، یہ ابھی طے ہونا باقی ہے۔سشما سوراج کا مزید کہنا تھا کہ ملکوں میں رابطے حکومت سے حکومت کے ہوتے ہیں انفرادی نہیں۔ساتھ ہی انہوں نے واضح کیا کہ بھارتی وزیر سرکاری نہیں ذاتی حیثیت میں کرتار پور راہداری کے سنگ بنیاد رکھنے کی تقریب میں شرکت کر رہے ہیں۔

زہر افشانی

راو لپنڈی (آ ئی این پی)کرتارپور راہداری کا سنگ بنیاد رکھنے کی تقریب کے حوالے سے بھارتی میڈیا کے پروپیگنڈے پر رد عمل دیتے ہو ئے پاک فوج نے کہا ہے کہ بھارتی میڈیا کا گوپال چاولہ کی آرمی چیف کے ساتھ لی گئی تصویر دکھانا تنگ نظری ہے، پا ک فو ج کے شعبہ تعلقات عا مہ (آ ئی ایس پی آ ر) کی جا نب سے بد ھ کو جا ری کر دہ بیان میں کہا گیاہے کہ گوپال چاولہ کی آرمی چیف کے ساتھ د لی گئی تصویر دکھانا تنگ نظری ہے، آرمی چیف جنر ل قمر جا وید با جوہ تقریب میں شناخت سے قطع نظر ہوکر تمام مہمانوں سے ملے،انہوں نے کہا کہ امن کیلئے پاکستان کی پہل کو پروپیگنڈے کی نذرنہیں کرنا چاہیے۔ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنر ل آ صف غفور نے اپنی ٹوئٹ میں بھارتی میڈیا پر کیے جانے والے پروپیگنڈے کے اسکرین شاٹ بھی شیئر کیے۔

مزید : کراچی صفحہ اول


loading...