RPOنے فیصل آباد اور ٹوبہ کے دوپولیس انسپکٹر برخاست کر دئیے

RPOنے فیصل آباد اور ٹوبہ کے دوپولیس انسپکٹر برخاست کر دئیے

  



فیصل آباد(کرائم رپورٹر)آر پی او فیصل آباد غلام محمود نے فرائض میں غفلت و لاپرواہی برتنے اور نااہلی کا مظاہرہ کرنے کے الزام میں فیصل آباد کے انسپکٹر احمد عدنان طارق اور ٹوبہ ٹیک سنگھ کے انسپکٹر صابر حسین شاہ کو نوکری سے برخاست کر دیا۔ جبکہ باخبر ذرائع کے مطابق انسپکٹر صابر حسین شاہ کو جوئے کے اڈہ سے منتھلی لینے کے الزام میں نوکری سے برخاست کیا گیا ہے اور انسپکٹر احمد عدنان طارق پرالزام تھا کہ انسپکٹر کی غفلت کے باعث 28جون 2019ء کو ملزم ناصر پہلوان نے مبینہ طور پر تھانہ سٹی جڑانوالہ کی چھت سے چھلانگ لگا کر خودکشی کی تھی اور ان پر کرپشن کا بھی الزام لگایا گیا ہے۔ باخبر ذرائع کے مطابق 27جون کو ایس ایچ او سٹی جڑانوالہ کی رخصت کی بناء پر اے ایس پی جڑانوالہ شعیب میمن نے انچارج انویسٹی گیشن تھانہ صدر جڑانوالہ انسپکٹر احمد عدنان طارق کو ایک رپٹ پر ہی ایس ایچ او سٹی جڑانوالہ تعینات کر دیا تھا جس کے اگلے ہی روز سرکل گشت پر ڈیوٹی پر مامور ہونے کے باعث انسپکٹر احمد عدنان طارق اس وقت سرکل ڈیوٹی پر تھے اور ملزم ناصر پہلوان کو اے ایس پی کے گن مین شراب کے نشہ میں دھت پکڑ کر لائے جس نے بعدازاں مبینہ طور پر رات تقریباً 2بجے مبینہ طور پر تھانہ کی چھت سے چھلانگ لگا کر خودکشی کر لی اور اس وقوعہ کی اطلاع ایس ایچ او کوتقریباً 4بجے کے قریب دی گئی بعدازاں اعلیٰ افسران نے لواحقین کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے ایک اے ایس آئی‘ ایک کانسٹیبل سمیت 7پولیس ملازمین کے خلاف مقدمہ درج کر لیا جن کی بعد میں صلح صفائی ہونے پر مقدمہ خارج کر دیا گیا ان تمام واقعات میں انسپکٹر احمد عدنان طارق کو کہیں بھی ملزم نامزد نہ کیا گیا تھا۔ انسپکٹر احمد عدنان طارق کے بارے میں عام تاثر یہ پایا جاتاہے کہ وہ ایک ایماندار پولیس افسر ہیں اور ادبی حلقوں میں ایک لکھاری کے طور پر بھی جانے پہچانے جاتے ہیں۔ اگرچہ پولیس ترجمان کا مؤقف ہے کہ دونوں انسپکٹرز کی 3ریگولر انکوائریاں کروائی گئیں جن میں متعلقہ انسپکٹرز اپنی صفائی میں ٹھوس ثبوت پیش نہ کر سکے جس کی بناء پر دونوں انسپکٹرز کو محکمہ پولیس سے برخاست کر دیا گیا باخبر ذرائع کے مطابق ان انسپکٹرز کوکسی بھی ریگولر انکوائری میں نہیں بلایا گیا۔

مزید : علاقائی