کرایہ داری کی سیل ڈیڈ پر اعتراضات معمول، شہری مشکل میں پھنس گئے 

  کرایہ داری کی سیل ڈیڈ پر اعتراضات معمول، شہری مشکل میں پھنس گئے 

  



لاہور(اپنے نمائندے سے) کرایہ داری ایکٹ میں ترمیم عوام الناس کے لئے وبال جان بن گئی، بورڈ آف ریونیو کے شعبہ رجسٹریشن برانچ کے سٹاف نے کرایہ داری کی سیل ڈیڈکو رجسٹرڈ کرنے کی بجائے اعتراضات کی بھرمار کر دی، شہریوں کی جانب سے شدید احتجاج، رجسٹریشن میں لڑائی جھگڑے کے واقعات رونما ہونے لگے، روزنامہ ”پاکستان“ کی جانب سے سروے کے دوران معلوم ہواکہ پنجاب حکومت کی جانب سے کرایہ داری ایکٹ میں ترمیم کے بعد بورڈ آف ریونیو کے شعبہ رجسٹریشن برانچوں کے سب رجسٹرار اور رجسٹری محرر زکو اختیار دیدیا گیا ہے کہ وہ کرایہ داری کی ڈیڈ رجسٹرڈ کریں تاہم 9ٹاؤنوں کے سب رجسٹرار اور رجسٹری محرروں نے اعتراضات کی بھرمار کر دی اور ایسے ایسے اعتراضات لگائے جا رہے ہیں جس سے کرایہ داری ڈیڈ تاخیر اور التوا میں پڑ چکی ہے اور سینکڑوں کی تعداد میں شہریوں کو خواری کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے شہری محمد عاطف، اسلم خان، وقار شاہ، نوید گھمن، تنویر شاہ نے الزام عائد کیا کہ کرایہ داری ڈیڈ کی رجسٹریشن کی آڑ میں رشوت طلب کی جا رہی ہے پیسے نہ دینے والے شہریوں کی کرایہ داری ڈیڈ پر اعتراضات جان بوجھ کر لگائے جا رہے ہیں۔ممبر ٹیکسرز فوری نوٹس لیں، اختر بٹ، آغا نوید، شرجیل خان، مزمل جٹ اور ہمایوں شاہ نے آگاہی دی کہ یہاں تو سب رجسٹرار صاحبان کو کرایہ داری کے ملنے والے اختیار کی سمجھ بوجھ نہیں ہے یا وہ جان بوجھ کر اسی معاملے پر عوام الناس کو تنگ کر رہے ہیں،شہریوں نے ڈی جی اینٹی کرپشن پنجاب سے بھی فوری نوٹس لینے کی اپیل کر دی ہے۔

اعتراضات

مزید : میٹروپولیٹن 1