صنعتی سیکٹر کو گیس کا مطلوبہ کوٹہ نہ ملنے سے اربوں روپے کے کرسمس اور نیو ایئر آرڈرز کی تکمیل مشکل

  صنعتی سیکٹر کو گیس کا مطلوبہ کوٹہ نہ ملنے سے اربوں روپے کے کرسمس اور نیو ...

  



لاہور (لیڈی رپورٹر)صنعتی سیکٹرکو فل کپیسٹی ورکنگ کیلئے گیس کامطلوبہ کوٹہ نہ ملنے سے اربوں روپے کے کرسمس آرڈرز کی تکمیل مشکل ہو گئی ہے اور صنعتی شعبہ کی جانب سے حکومت سے اپیل کی گئی ہے کہ ملک و قوم کے بہترین معاشی و اقتصادی مفاد میں صنعتوں کیلئے گیس کا پہلے سے جاری کوٹہ بڑھا کر دسمبر کے مہینہ کے دوران 100فیصد کر دیا جائے تاکہ بیرون ممالک سے موصول ہونے والے کرسمس اور نیو ایئر آرڈرزکی بر وقت تکمیل سمیت صنعتکار اپنے بین الاقوامی برآمدی آرڈر پورے کرسکیں۔

آل پاکستان کاٹن پاور لومز ایسوسی ایشن کے ترجمان نے بتایا کہ ٹیکسٹائل سیکٹر سے وابستہ برآمد کنندگان بڑی مشکلوں کے ساتھ بین الاقوامی منڈیوں تک مقابلتی رسائی حاصل کرکے ایکسپورٹ آرڈرز حاصل کرنے میں کامیاب ہوئے ہیں جبکہ انہیں جرمنی میں منعقد ہونے والی انٹرنیشنل ہیم ٹیکس نمائش میں شرکت کیلئے بھی مصنوعات کی تیاری کرناہے لہٰذا اسے گیس کا زیادہ سے زیادہ کوٹہ فراہم کیاجائے۔

انہوں نے کہاکہ جب تک گیس کے نئے ذخائر دریافت نہیں ہوتے اور ملک میں ایل این جی وافر مقدار میں دستیاب نہیں ہوتی اس وقت تک سیاسی بنیادوں پر نئے کنکشنز اور نئی بستیوں میں گیس پائپ لائنز بچھانے کاعمل مؤخر کردیاجائے۔ انہوں نے کہاکہ گیس کا مطلوبہ کوٹہ نہ ملنے سے اکثر بڑے صنعتی ادارے بند ہو جائیں گے کیونکہ گیس فائرڈ مشینری 17 یا 25 فیصد کوٹہ پر چل ہی نہ سکتی ہے۔ انہوں نے کہاکہ اداروں کی بندش سے صنعتی مزدوروں میں بیروزگاری پھیلے گی اور ہزاروں لاکھوں گھرانے فاقہ کشی کاشکار ہوں گے۔ انہوں نے اپیل کی کہ حکومت کرسمس اور نیوایئر کے آرڈرز سمیت ہیم ٹیکس انٹرنیشنل نمائش کیلئے کپڑے کی مصنوعات تیار کرنے کی غرض سے ٹیکسٹائل سیکٹر کو رواں ماہ کے دوران زیادہ سے زیادہ گیس کی فراہمی یقینی بنائے تاکہ ملک قیمتی زرمبادلہ حاصل کرنے کے قابل ہو سکے۔

مزید : کامرس