عمران خان کے وکیل اور پی ٹی آئی رہنماوں کے متضاد بیانات، حقیقت کیا ہے؟

عمران خان کے وکیل اور پی ٹی آئی رہنماوں کے متضاد بیانات، حقیقت کیا ہے؟
 عمران خان کے وکیل اور پی ٹی آئی رہنماوں کے متضاد بیانات، حقیقت کیا ہے؟

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

 لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) تحریک انصاف کے پارٹی الیکشن میں عمران خان کے حصہ لینے یا نہ لینے سے متعلق متضاد بیانات سامنے آ رہے ہیں، بیرسٹر ظفر علی نے کہا کہ چیئرمین عمران خان 2 دسمبر کو انٹراپارٹی الیکشن میں حصہ نہیں لیں گے جبکہ لطیف کھوسہ نے بیان دیتے ہوئے کہا کہ عمران خان انٹراپارٹی الیکشن میں حصہ لیں گے ۔

نجی ٹی وی جیو نیوز کےمطابق پاکستان تحریک انصاف کے سینئر رہنما بیرسٹر علی ظفر نے اعلان کرتے ہوئے کہا کہ ہم 2 دسمبر کو انٹر اپارٹی الیکشن کروانے جارہے ہیں اور عمران خان اس میں حصہ نہیں لیں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ انٹر اپارٹی الیکشن لڑنے سے متعلق عمران خان سے مشاورت کی گئی ہے، چیئرمین پی ٹی آئی کے خلاف صرف توشہ خانہ کیس میں فیصلہ ہواہے ،توشہ خانہ کیس میں سزا ماتحت عدلیہ نے سنائی جو غیر آئینی ہے ،توشہ خانہ کیس میں جو الزام لگایا گیا اس پر نااہلی نہیں ہو سکتی، چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان نے انٹر پارٹی الیکشن کروانے کی منظوری دیدی ہے ،انہوں نے کہا ہے کہ الیکشن کمیشن کو کوئی بہانہ نہیں دینا چاہتے، ہم  خطرہ مول نہیں لے سکتے کہ ہمیں بلے کا نشان نہ ملے۔

اس سے کچھ دیر قبل عمران خان کے وکیل لطیف کھوسہ نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا تھا کہ چیئرمین پی ٹی آئی سے ڈیڑھ گھنٹہ بات ہوئی۔ لطیف کھوسہ نے عمران خان  کے پارٹی الیکشن میں حصہ نہ لینے کی تردید کی اور کہا کہ عمران خان پارٹی الیکشن میں حصہ لیں گے۔

سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ عمران خان پارٹی الیکشن میں حصہ لیں گے یا نہیں، دونوں رہنماؤں کے بیانات ایک دوسرے کے مخالف موقف پیش کر رہے ہیں، حقیقت کیا ہے، متضاد بیانات نے صورتحال  مشکوک بنا دی۔

مزید :

قومی -