18 عہدیداروں کو گھروں سے اٹھا یا گیا ، چیف جسٹس نوٹس لیں، عوامی تحریک

18 عہدیداروں کو گھروں سے اٹھا یا گیا ، چیف جسٹس نوٹس لیں، عوامی تحریک

لاہور(خبر نگار خصوصی) پاکستان عوامی تحریک کے سیکر ٹری جنرل خرم نواز گنڈا پورنے چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ کے نام کھلے خط میں کہا ہے کہ ہمارے 18 عہدیداروں کو گھروں سے اٹھا لیا گیا ،انکی زندگی کو خطرہ ہے ، چیف جسٹس نوٹس لیں اورگرفتار کارکنوں کی بازیابی کا حکم دیں ۔ پارٹی عہدیداروں کو نقصان پہنچا تو ذمہ دار میاں نواز شریف ،میاں شہباز شریف،چودھری نثار اور آئی جی پنجاب ہونگے ۔انہوں نے خط میں لکھا کہ عہدیداروں کو تحصیل صفدر آباد،پسرور،راولپنڈی ،چکوال،کلر کہار،اٹک،فتح جنگ،تلہ گنگ،سیالکوٹ ،پنڈی گھیپ سے اٹھایا گیا۔انہوں نے اپنے کھلے خط میں عہدیداروں کے نام تحریر کرتے ہوئے کہا کہ جن 18عہدیداروں کو گھروں سے اٹھا یا گیا ان میں اشفاق احمد ،بشیر رندھاوا،ثقلین شاہ گیلانی،منیر احمد،ملک شمشاد،ملک ممتاز ،محمد جعفر صادق،فلک شیر علی ،صوفی ارشد،گلزمان،خلیل اختر،مشرف غفار،وسیم رمضان ،شکیل احمد،محمد شفیق،طارق محمود،عبد الوحید،محمد اشفاق شامل ہیں ۔خرم نواز گنڈا پور نے کہاکہ 27اکتوبر کو اپنے وکیل اشتیاق چودھری ایڈووکیٹ کے ذریعے لاہور ہائیکورٹ میں رٹ پٹیشن کی تھی اور معزز عدالت سے تحفظ کی استدعا کی گئی تھی اگر درخواست پر فوری ایکشن ہو جاتا تو ہمارے کارکن اس غیر قانونی پکڑ دھکڑ سے بچ جاتے۔انہوں نے کہاکہ حکمران ہوش و حواس کھو بیٹھے ہیں ، چادر اور چار دیواری کے تقدس اور آئین و قانون کو حکمران پامال کر رہے ہیں ،عوام کی آئینی آزادیاں چھین لی گئیں ۔اس صورتحال پر صرف عدالت کا ایک ایسا فورم ہے جو حکومتی جبر کے شکار شہریوں کو فوری ریلیف دے سکتا ہے ۔انہوں نے کہاکہ’’ سلیکٹڈ جسٹس ‘‘ سے قومیں تباہ اور ملک برباد ہو جاتے ہیں ۔چیف جسٹس ہماری گزارشات پر ہمدردانہ غور فرماتے ہوئے پولیس کے چھاپے بند اور ہمارے عہدیداروں کی بازیابی کا حکم صادر فرمائیں۔

مزید : صفحہ آخر