عمرہ زائرین پردوہزارریال اضافی ٹیکس کے خاتمہ کی سفارشات مسترد

عمرہ زائرین پردوہزارریال اضافی ٹیکس کے خاتمہ کی سفارشات مسترد

لاہور(ڈویلپمنٹ سیل)سعودی وزارت الحج نے بھی سعودی عمرہ کمپنیوں کی دو ہزار ریال عمرہ زائرین پر ختم کرنے کی سفارشات مسترد کر دیں ۔دنیا بھر کے عمرہ ایجنٹوں کی امیدیں خادم حرمین شریفین شاہ سلمان بن عبد اللہ سے وابستہ ہو گئیں،اب دو ہزار ریال صرف شاہ سلمان ہی ختم کرا سکتے ہیں ،دو ہزار ریال اضافی عائد ہونے کے بعد مارکیٹ سے عمرہ زائرین ہی غائب ہو گئے ہیں،ائیرلائنز سمیت عمرہ ایجنٹوں،سعودیہ میں ہوٹلز خریدنے والوں کو زبردست نقصان کاسامنا ہے۔ وزارت مذہبی امور نے اب تک کوئی احتجاجی مراسلہ سعودی حکومت کو جمع نہیں کرایا جس میں سعودی حکومت سے مطالبہ کیا گیا ہو ،دو ہزار ریال ختم کیے جائیں ،دو ہزار ریال ختم نہ ہونے سے نقصان ،وزارت مذہبی امور کا بظاہر نہیں ہو گا ائیرلائنز ،ہوٹلزوالے تباہ ہو رہے ہیں 10لاکھ عمرہ زائرین جاتے ہیں اور ہزاروں دفاتر ملک بھر میں موجود ہیں لاکھوں خاندان اس کاروبار سے وابستہ ہیں دو ہزار ریال عائد ہونے کا مقصد ہے60ہزار روپے بغیر عمرہ ویزہ،رہائش اور ٹکٹ کے جس کے پاس ہوں گے وہی عمرہ کے لیے پاسپورٹ جمع کرا سکے گا ،60ہزار دو ہزار ریال ،کا 60ہزار ٹکٹ کا ، 20ہزار ویزہ کا ،50ہزار کی رہائش مکہ،مدینہ کا دینا ہو گا ،ڈیڑھ سے دو لاکھ کا کم ازکم عمرہ ہو سکے گا ،دو ہزار ریال عائد ہونے کے بعد پاسپورٹ آنا بند ہو گئے ہیں بحران بڑھتا ہی جا رہا ہے ،عمرہ ایجنٹوں نے وزیر اعظم پاکستان سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ مداخلت کریں اور سعودی حکومت کو دوستی کا واسطہ دے کر اللہ کے مہمانوں پر لگائے گئے ٹیکس کو معاف کرائیں۔

مزید : صفحہ آخر