پیپلزپارٹی نے چوہدری نثار کے استعفے کا مطالبہ کردیا، حکومت بوکھلاہٹ کا شکار، پاناما بل پر پی ٹی آئی کیساتھ ہیں: چوہدری اعتزازاحسن

پیپلزپارٹی نے چوہدری نثار کے استعفے کا مطالبہ کردیا، حکومت بوکھلاہٹ کا ...
پیپلزپارٹی نے چوہدری نثار کے استعفے کا مطالبہ کردیا، حکومت بوکھلاہٹ کا شکار، پاناما بل پر پی ٹی آئی کیساتھ ہیں: چوہدری اعتزازاحسن

  

کراچی (مانیٹرنگ ڈیسک) پاکستان پیپلزپارٹی نے نیشنل ایکشن پلان پر عمل درآمد نہ ہونے اور کالعدم تنظیموں کو کام کی اجازت دینے پر وفاقی وزیرداخلہ چوہدری نثار علی خان سے استعفے کا مطالبہ کردیا اور واضح کیا کہ اسلام آباد میں پولیس گردی اور سیاسی کارکنان پر تشدد واضح دلیل ہے کہ حکومت بوکھلاہٹ کا شکار ہے جبکہ تحریک انصاف سے بدستور کئی معاملات پر اختلاف ہے لیکن پاناما بل پر پی ٹی آئی کیساتھ مکمل اتفاق ہے ۔

پارٹی اجلاس کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے چوہدری اعتزاز احسن نے کہاکہ حکومتی جانتی ہے کہ ان کی چوری پکڑی گئی اور اب بوکھلاہٹ کا شکار ہے ، اسلام آباد میں ہونیوالے تشدد کی مذمت کرتے ہیں اور جس انداز میں وزیراطلاعات سے استعفیٰ لے لیاگیا، لگتاہے کہ میاں صاحب کے پاﺅں پھسل گئے ، توازن سنبھالنا ، اقتدار کو سہارادینا حکومت کیلئے مشکل ہے ۔اُنہوں نے کہاکہ قمرزمان قائرہ اور ان کی موجودگی میں تین وفاقی وزراءاپوزیشن لیڈر خورشید شاہ کے گھر تشریف لائے تھے اور اب وضاحت نہیں کروں گا کہ مقصد کیا تھا کیونکہ لوگ سمجھ سکتے ہیں۔انہوں نے بتایاکہ بلاول نے 16اکتوبر کوچارمطالبات پیش کیے جن پر آج تک عمل نہیں ہوا۔

1۔ پارلیمنٹ کی سیکیورٹی کمیٹی تشکیل دی جائے

2۔ اقتصادی راہدای پر عمل درآمد اس حوالے سے ہوناچاہیے کہ ملک میں مساوی ترقی کا ضامن ہے

3۔ پاناما لیکس پر انکوائری بل کو منظور کرنا

4۔ وزیر خارجہ مقرر کیا جائے

اعتزازاحسن نے کہاکہ پانامہ بل پر تحریک انصاف کیساتھ مکمل اتفاق ہے جبکہ بدستور بہت سے اختلافات ہیں ،کشمیر پر ہونیوالی اے پی سی میں حکومت نے وعدہ کیا تھا کہ نیشنل سیکیورٹی کمیٹی بنائی جائے گی لیکن لکھتے نہیں جس پر ہم نے اعتبار کیا اور آج تک کمیٹی نہیں بنی ۔

اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے فرحت اللہ بابر نے بتایاکہ ’بلاول کی زیرصدارت اجلاس میںنیشنل ایکشن پلان پر عمل درآمد سمیت مختلف امور میں بحث کی گئی ، ہم سمجھتے ہیں کہ موجودہ صورتحال کے کئی عوامل ہیں جس کی اہم وجہ وزارت داخلہ کی نیشنل ایکشن پلان پرعمل درآمد میں ناکامی ہے ، کبھی چوہدری نثار صوبائی حکومتوں کا معاملہ قراردیاجاتاہے توکبھی بیرونی ممالک پر ملبہ ڈالا جاتاہے ، حال ہی میں ایک کالعدم تنظیم کے رہنماﺅں سے ملاقاتیں بھی کی ہیں اور ایک تنظیم کو اسلام آباد میں جلسے کے اجازت بھی دی ہے ،پیپلزپارٹی اس نتیجے پر پہنچی ہے کہ وزیرداخلہ دہشتگردی سے نمٹنے کیلئے خواہشمند نہیں ۔ان تمام چیزوں پر غور کرنے کے بعد فیصلہ کیاگیاکہ باضابطہ طورپر یہ مطالبہ کرتے ہیں کہ وزیرداخلہ سے استعفیٰ طلب کیا جائے ،بہتر ہے کہ اپنی ناکامی پر وہ خود استعفیٰ دیدیںیاپھر اگرخود نہیں دیتے تووزیراعظم کو چاہیے کہ استعفیٰ طلب کرلیں۔فرحت اللہ بابر کاکہناتھاکہ موجودہ سیاسی صورتحال بتدریج بگڑتی جارہی ہے اوراس کا ایک اہم مسئلہ نیشنل ایکشن پلان پر عمل درآمد نہ ہونا اور کالعدم تنظیموں کا کام کرنے کی اجازت دیناہے ۔

مزید : قومی /اہم خبریں