نواز شریف اپنے پاؤں پر کلہاڑی مارنے کا ماہر،وزیر اعظم قابل اعتماد نہیں ،اداروں نے ’’نشان ‘‘ لگا دیا :شیخ رشید

نواز شریف اپنے پاؤں پر کلہاڑی مارنے کا ماہر،وزیر اعظم قابل اعتماد نہیں ...
نواز شریف اپنے پاؤں پر کلہاڑی مارنے کا ماہر،وزیر اعظم قابل اعتماد نہیں ،اداروں نے ’’نشان ‘‘ لگا دیا :شیخ رشید

  

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک) عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید احمد نے کہا ہے کہ نواز شریف اپنے پاؤں پر کلہاڑی مارنے کا ماہر ہے،کارکنوں پرتشدد کرکے وہ اپنے اوپر ایک وار کر چکا ، 2 نومبر کو رویہ نہ بدلا تو سخت ردعمل آئے گا،نواز شریف مجھے ذاتی طور پر جانتے ہیں،اداروں نے ان پر نشان لگا دیا ،آرمی چیف کے گھر پر ہونے والی میٹنگ انتہائی خطرناک اور خوفناک تھی ، حالات بہت خراب ہیں ،پتہ نہیں نتیجہ کیا ہوگا؟۔

نجی ٹی وی چینل ’’اے آر وائے نیوز ‘‘ کے پروگرام ’’پاور پلے ‘‘میں گفتگو کرتے ہوئے شیخ رشید نے کہا کہ مسئلہ راحیل شریف کا نہیں ہے ،جنہوں نے حلف اٹھایا ہوا ہے ،پاکستان کے ساتھ جینے مرنے کا ،پاکستان کا دشمن ان کا دشمن اور پاکستان کا دوست ان کا دوست ہے ،اداروں نے ان پر نشان لگا دیا ہے کہ یہ ٹرسٹ ورتھی (اعتماد کے قابل )نہیں ہیں ،جب تین وزراء اور وزیر اعلیٰ آرمی چیف کے گھر جائے تو سمجھ لیں کہ دال میں کالا ہے ،جب گورنمنٹ آرمی چیف کے آفس نہیں گھر میں جائے تو سمجھ لیں کہ چنگاری سلگ رہی ہے ،جو ان کا مخالف ہو جائے حکومت انہیں اپنا ذاتی دشمن سمجھنا شروع کر دیتی ہے ،جو چور ہوتا ہے اس کے پاؤں نہیں ہوتے ،اداروں نے ان کو سب ثبوت دے دیئے ہیں ،بیوروکریٹ نے حکومت کو واضح کہا ہے کہ اگر مجھے قربانی کا بکرا بنایا گیا تو وہ ’’سلطانی گواہ ‘‘ بن جائے گا ،اگر وہ سلطانی گواہ بن گیا تو یہ پھانسی پر چڑھ جائیں گے ۔

انہوں نے کہا کہ آرمی چیف کے گھر پر ہونے والی میٹنگ انتہائی خطرناک اور خوفناک تھی اور انہوں نے اپنا فیصلہ کر لیا ہے ، میرا بھتیجا مجھے لال حویلی سے گرفتاری دینے کی رائے دے رہا تھا ،میں نے دیکھا کارکن لاٹھیاں کھا رہے ہیں تو تہیہ کیا کہ کمیٹی چوک جاؤں گا۔ انہوں نے کہاکہ میں سوشل میڈیا کا استعمال نہیں جانتا، دوستوں کا مشکور ہوں جو یہ کام کرتے ہیں، عمران خان بنی گالہ کی بجائے راولپنڈی آئیں، ہم انہیں سینکڑوں کے قافلے کے ساتھ اسلام آباد پہنچائیں گے، میرا کام اور میرا جلسہ ختم ہوگیا، 2 نومبر کو عمران خان کا ساتھ دینے کا وعدہ کیا ہے۔ شیخ رشید نے کہا کہ چوہدری نثار کے والد نے مجھے کہا تھا کہ مجھ سے غلطی ہوئی جس بیٹے کو فوج میں بھیجنا تھا اسے سیاست میں بھیج دیا اور جسے سیاست میں ہونا چاہیے تھا اسے فوج میں بھیج دیا۔

انہوں نے کہا کہ راحیل شریف رہے یا نہ رہے فوج نے عہد کیا ہے کہ سیکیورٹی کے معاملات پر سمجھوتہ نہیں کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ شہباز شریف ،چوہدری نثاراور اسحاق ڈار کی آرمی چیف کے ساتھ ڈیڑھ گھنٹے کی میٹنگ تھی جو بہت بری تھی انہوں نے کہاکہ فوج کی غلط فہمی ہے کہ شہباز شریف کی بات نواز شریف سنتا ہے ،شہباز شریف کی نواز شریف کے سامنے بات کرنے کی ہمت ہی نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ نواز شریف اپنے پاؤں پر کلہاڑی مارنے کا ماہر ہے اس نے لال حویلی کو بند کرکے اور اسلام آباد اور راولپنڈی میں کارکنوں پر تشدد کرکے ایک وار کردیا ہے، اگر انہوں نے دو نومبر کو رویہ نہ بدلہ تو پھر ردعمل آئے گا۔ انہوں نے کہا کہ سب ٹھیک نہیں، حالات بہت خراب ہیں ،پتہ نہیں نتیجہ کیا ہوگا؟ راحیل شریف نواز شریف کے ذہن کو بہت دیر بعد سمجھا ہے۔ انہوں نے کہا کہ نواز شریف اتنا بہادر نہیں ہے، پرویز رشید ‘خواجہ آصف ‘سعد رفیق ‘ عابد شیر علی بزدل لوگ ہیں، یہ معافیاں مانگنے والے لوگ ہیں ،میری خواہش ہے کہ قمر زمان کائرہ ،لطیف کھوسہ اور اعتزاز احسن احتجاج میں شامل ہوں، میں انہیں اپنے جلسے میں بھی بلانا چاہتا تھا۔

مزید : قومی /اہم خبریں