بھارتی حکومت کا جہاد کونسل کے سربراہ کو ذہنی طور پر ٹارچر بنانے کامنصوبہ


سرینگر ،دہلی (کے پی آئی )بھارتی حکومت نے کشمیریوں کی مسلح جدوجہد کو دباے میں نامی پر اب نئے حربے استعمال کرنے شروع کردئیے اس منصوبے کے تحت حزب المجاہدین کے سربراہ اور متحدہ جہاد کونسل کے چیرمین سید صلاح الدین کو ذہنی طور ٹارچرکرنے کے لئے ان کے خاندان و رشتہ داروں کے خلاف بھارتی خفیہ ایجنسیوں نے کریک ڈاون شروع کردیا ہے خصوصی تحقیقاتی ادارے نے ٹیرر فنڈنگ اور حوالہ رقومات کے لین دین کے بارے میں حزب المجاہدین اور متحدہ جہاد کونسل کے سربراہ کے نواسے کو پوچھ تاچھ کیلئے نوٹس جاری کردیا ہے۔ سید صلاح الدین کے بیٹے شاہد یوسف کی گرفتار ی کے بعد ان کی بیٹی کے بیٹے مزمل کو ٹیرر فنڈنگ اور حوالہ رقومات کے لین دین کے بارے میں پوچھ تاچھ کی غرض سے نوٹس جاری کردیا گیا ۔ واضح رہے کہ این آئی اے نے ٹیررفنڈنگ اور حوالہ رقومات کے بارے میں 26اکتوبر کو سید شاہد یوسف کے رہائشی مکان واقع سوئیہ بگ بڈگام پر چھاپہ ڈالا تھا جس کے دوران خصوصی تحقیقاتی ادارے نے لپ ٹا پ ،ہار ڈ ڈسک ،موبائیل فون اور اہم نوعیت کے دستاویزات اپنی تحویل میں لینے کا دعویٰ کیا تھا۔
۔ ۔مزمل احمد کے اہلخانہ کا کہا ہے کہ مزمل کی چند ماہ سے صحت ٹھیک نہیں ہے اورڈاکٹروں نے انہیں مکمل آرا م کا مشورہ دیا ہے۔خصوصی تحقیقاتی ادارے کی اس کارروائی کے بعد سید صلاح الدین کے نواسے کو این آئی اے نے پوچھ تاچھ کیلئے نوٹس اجراء کی جبکہ ادارے نے پہلے ہی حریت کانفرنس کے 7لیڈروں سمیت 11افراد کو ٹیرر فنڈنگ اور حوالہ رقومات کے بارے میں گرفتار کیا ہے،دریں اثنا کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین سید علی گیلانی نے سید صلاح الدین کے گھر پربھارتی تحقیقاتی ادارے ’’این آئی اے ‘‘کے چھاپے، بیٹے کی گرفتاری کے بعد اب ان کے نواسے مزمل احمد خان کو دہلی طلب کرنے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ اس طرح کی کاروائیاں سیاسی انتقام گیری کے سوا کچھ نہیں۔ سید علی گیلانی نے سرینگر میں جاری ایک بیا ن میں کہا کہ مزمل احمد خان طالب علم ہیں اور این آئی اے کی طرف سے ان کی طلبی کا اقدام انکے تعلیمی مستقبل کو تباہ کرنے کی ایک دانستہ کوشش کی ہے ۔ انہوں نے سید صلاح الدین کے اہلخانہ کے خلاف کارروئیوں پر شدید ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ یہ سب کشمیرکی آزادی کے لیے ان کی جدوجہد پر اثر انداز ہونے کے لیے کیا جارہا ہے مگر بھارت کو اس طرح کے اوچھے ہتھکنڈو ں سے کچھ حاصل نہیں ہوگا۔ سید علی گیلانی نے بھارتی حکومت کی طرف سے معروف عالم دین ڈاکٹر ذاکر نائک کے خلاف چارج شیٹ پر بھی سخت ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ذاکر نائک نے کبھی بھی انتہا پسندی یا معاشرے میں تفریق کی ترویج نہیں کی بلکہ ہمیشہ اسلام کے پُر امن پیغام کو دوسروں تک پہنچاتے رہے لہذا بھارتی حکومت انکے خلاف بے بنیاد پروپیگنڈ ہ کر کے اپنے عوام کو گمراہ کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔

مزید : عالمی منظر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...