افغان صوبہ کنڑ کے ڈپٹی گورنر محمد نبی احمدی پشاور کے ڈبگری گارڈن سے اغو

افغان صوبہ کنڑ کے ڈپٹی گورنر محمد نبی احمدی پشاور کے ڈبگری گارڈن سے اغو

ا پشاور/اسلام آباد( این این آئی)افغانستان کے صوبہ کنڑ کے ڈپٹی گورنر محمد نبی احمدی کو پشاور کے ڈبگری گارڈن کے علاقے سے نامعلوم افراد نے اغوا ء کر لیا جس کی اطلاع افغان قونصل خانے نے اسلام آباد میں دفتر خارجہ کو دی ہے۔پاکستان کے ترجمان دفترخارجہ نے کہاہے کہ صوبہ کنڑکے ڈپٹی گورنرکی تلاش کیلئے متعلقہ حکام کوہدایت جاری کردی گئی ہیں۔بی بی سی کے مطابق یہ واقعہ گزشتہ روز ڈبگری گارڈن کے علاقے میں پیش آیا ہے ۔ افغان قونصل خانے کے حکام نے بتایا کہ صوبہ کنڑ کے ڈپٹی گورنر محمد نبی احمدی پشاور میں علاج کے غرض سے آئے تھے ۔ گزشتہ روز ڈبگری گارڈن میں ڈاکٹر کے پاس جانے کے لیے جب اپنی گاڑی سے اتر رہے تھے تو اس وقت کالے شیشوں والی ایک گاڑی سے نامعلوم افراد اترے اور ڈپٹی گورنر کو زبردستی اپنی گاڑی میں بٹھا کر ساتھ لے گئے ۔پشاور میں تعینات افغان قونصل جنرل معین مرستیال نے بتایا کہ انہیں اغوا ء کی اطلاع محمد نبی احمدی کے رشتہ داروں نے دی ہے جس کے بعد انہوں نے دفتر خارجہ کو بتایا دیا ہے ۔محمد نبی احمدی کے بارے میں معلوم ہوا ہے کہ ان کی عمر پچاس برس کے لگ بھگ تھی اور وہ گردوں کے عارضے میں مبتلا تھے ۔ محمد نبی احمدی پشاور میں ڈاکٹر سے طبی معائنے کے لیے آئے تھے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق افغان سفارتخانے نے صوبہ کنڑکے ڈپٹی گورنرکی گمشدگی سے متعلق پاکستان سے مددکی درخواست کی ہے۔ترجمان دفترخارجہ نے کہاہے کہ صوبہ کنڑ کے ڈپٹی گورنرکی تلاش کیلئے متعلقہ حکام کوہدایت جاری کردی گئی ہیں۔ سی سی پی اوپشاور کا کہنا ہے کہ نبی احمدی کے پشاور میں اغوا ہونے کے معاملے پر تحقیقات کیلئے آپریشنل اورانوسٹی گیشن ٹیمیں تشکیل دے دی گئی ہیں۔

ڈپٹی گورنر محمد نبی احمدی

مزید : علاقائی