کچھ لوگ مسلم لیگ (ن) اور فوج میں جنگ چاہتے ہیں : احسن اقبال

 لاہور( مانیٹرنگ ڈیسک 228صباح نیوز)وفاقی وزیر داخلہ چو دھری احسن اقبال نے کہاہے کہ حکومت کیخلاف ٹرائیکا تشکیل دیا گیا ہے جس میں بعض ناکام سیاستدان، صحافی اور(ر)فوجی شامل ہیں، یہ مخصوص لابی بیانیہ بنارہی ہے ،یہ حکومت اور فوج کے درمیان اختلافات پیدا کر کے غیر آئینی اقدام کے خواہشمند ہے تاکہ ان کی نوکریاں پکی ہو جائیں،وہ سمجھتے ہیں کہ کوئی غیر آئینی اقدام ہوگا تو کوئی پکی نوکری مل جائے گی لیکن یہ ان کا محض خواب ہے، وقت مقررہ پر انتخابات ہوں گے جس سے نہ صرف پاکستان مضبوط ہوگا بلکہ دنیا میں ہمارا امیج بہتر ہوگا، ہماری حکومت نے ملک میں امن قائم کرنے کے لیے اقدامات کئے ہیں ۔ایک مخصوص لابی بیانیہ بنارہی ہے اور کچھ لوگ مسلم لیگ (ن) اور فوج کے درمیان جنگ چاہتے ہیں۔ ملک میں جمہوریت مستحکم ہے ، اداروں کے درمیان کوئی ٹکراؤ نہیں ، ایک ٹرائیکا، چند ناکام سیاستدان، ریٹائرڈ فوجی افسر جو ٹی وی پر آکر دای کرتے ہیں ایکسپو سنٹر لاہور میں انٹرنیشنل کانفرنس اورنمائش سے خطاب اور میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے احسن اقبال نے کہا کہ کچھ ریٹائرڈ فوجی، سیاستدان اور چند صحافی ہیں، یہ مخصوص لابی بیانیہ بنارہی ہے، وہ سمجھتے ہیں کہ کوئی غیر آئینی اقدام ہوگا تو کوئی نوکری مل جائے گی لیکن یہ ان کے خواب ہیں کیونکہ پاکستان ایک نارمل ملک بن چکا ہے، ریٹائرڈفوجی ،ناکام سیاستدان اوربعض صحافی غیرآئینی اقدام کیلئے بیانیہ بنا رہے ہیں،یہ حکومت اور فوج کے درمیان اختلافات پیدا کر کے غیر آئینی اقدام کے خواہشمند ہیں تاکہ ان کی نوکریاں پکی لگ جائیں۔وہ سمجھتے ہیں کہ کوئی غیر آئینی اقدام ہوگا تو کوئی پکی نوکری مل جائے گی لیکن یہ ان کے خواب ہے، اداروں کے درمیان کوئی ٹکرا ؤنہیں،وقت مقررہ پر انتخابات ہوں گے جس سے نہ صرف پا کستان مضبوط ہوگا بلکہ دنیا میں ہمارا امیج بہتر ہوگا۔ ماری حکومت نے ملک میں امن قائم کرنے کے لیے اقدامات اٹھائے، جو بھی استحکام اور امن کو خراب کرے گا وہ ملک سے دشمنی کرے گا۔ہم دنیا کو پیغام دینے جارہے ہیں پاکستان ایک مستحکم جمہوریت ہے،حکومت نے قرضے عیاشی یا خسارے کیلئے نہیں ملک کی بہتری کی خاطر لیے ہیں سابق وزیراعظم نواز شریف نے کراچی میں تمام جماعتوں اور تاجروں کو اکٹھا کرکے آپریشن کا فیصلہ کیا، امن اور سیاسی استحکام کے بغیر معیشت ترقی نہیں کرسکتی اور جو بھی استحکام اور امن کو خراب کرے گا وہ ملک سے دشمنی کرے گا،حکومت نے قرضے عیاشی یا خسارے کے لیے نہیں بلکہ ملک کی بہتری کی خاطر لیے ہیں، پاناما کیس کی وجہ سے اسٹاک مارکیٹ میں پاکستان کو 40 ارب ڈالر کا نقصان ہوا،بیرونی قرضے پاکستان کے لیے فائدہ مند ہیں جس سے توانائی سمیت دیگر شعبوں کے بنیادی ڈھانچے تعمیر اور صنعتی پیداروار میں اضافہ ہورہا ، گزشتہ تین سال کے دوران مجموعی ملکی پیداوار (جی ڈی پی)میں اضافہ ہوا ، اضافے کے ساتھ ہی قرض لینے کی صلاحیت بھی بڑھ جاتی ہے ۔ احسن اقبال نے کہا کہ تعلیمی اور صنعتی شعبے کے درمیان رابطہ قائم کرنے کی اشد ضرورت ہے تاکہ جدت اور کاروبار کے فروغ کے اہداف حاصل کئے جاسکیں، وزیر داخلہ نے دنیا بھر میں بدلتے رجحانات کو اپنانے پر زور دیا۔احسن اقبال نے کہا کہ کچھ ریٹائرڈ فوجی، سیاستدان اور چند صحافی ہیں، یہ مخصوص لابی بیانیہ بنارہی ہے، وہ سمجھتے ہیں کہ کوئی غیر آئینی اقدام ہوگا تو کوئی نوکری مل جائے گی لیکن یہ ان کے خواب ہیں کیونکہ پاکستان ایک نارمل ملک بن چکا ہے۔وزیر داخلہ کا مزید کہنا تھا کہ ہم نے چھیاسٹھ سال کی قیمت ادا کرکے پانچ سالہ مدت کی حرمت کو بحال کیا، ہم دنیا کو پیغام دینے جارہے ہیں کہ پاکستان ایک مستحکم جمہوریت ہے، انہوں نے واضح کیا کہ2018میں وقت مقررہ پر انتخابات ہوں گے جس سے نہ صرف پاکستان مضبوط ہوگا بلکہ دنیا میں ہمارا امیج بہتر ہوگا۔وزیر داخلہ کا کہنا تھا کہ رات آٹھ سے بارہ بجے کے درمیان چند ٹاک شوز ملک کو ڈبوتے ہیں اور بارہ بجے پھر پاکستان دوبارہ نارمل ہوجاتا ہے، پاکستان ایک ابھرتا ہوا ملک ہے، اس کی معیشت مستحکم ہورہی ہے، ، پاکستان ابھرتا ہوا ملک ہے، اس کی معیشت مستحکم ہورہی ہے، ورلڈ بینک نے کہا کہ پاکستان نے 10 سال کی بلند ترین گروتھ ریٹ حاصل کی۔احسن اقبال کا کہنا تھا کہ بیرونی قرضے پاکستان کے لیے فائدہ مند ہیں جس سے ملک میں توانائی کے شعبے سمیت دیگر شعبوں کے بنیادی ڈھانچے کی تعمیر ہو رہی ہے اور صنعتی پیداروار میں اضافہ ہورہا۔احسن اقبال کا کہنا تھا کہ ورلڈ بینک کی ایک رپورٹ کے مطابق ملک کی ترقی کی شرح بڑھ رہی ہے جبکہ پاکستان میں گزشتہ تین سالوں کے دوران مجموعی ملکی پیداوار (جی ڈی پی)میں اضافہ ہوا ہے اور اس اضافے کے ساتھ ہی قرض لینے کی صلاحیت بھی بڑھ جاتی ہے۔ جو لوگ پاکستان کے قرضوں کے حجم کے حوالے سے بات کرتے ہیں وہ یہ نہیں جانتے کہ پاکستان کے قرضوں کا حجم ملک کے جی ڈی پی کے مقابلے میں متوازن ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ معیشت کوچلانا ہے تو سیاسی استحکام لازم ہے، پاکستانی معیشت مستحکم ہے، تنقید کرنے والے منفی بات کرتے ہیں۔ احسن اقبال کا کہنا تھا کہ کسی بھی معیشت کے لیے استحکام اور امن دونوں ضروری ہوتے ہیں، ہماری حکومت نے ملک میں امن قائم کرنے کے لیے اقدامات اٹھائے، ان کا مزید کہنا تھا کہ ملکی معیشت میں بہتری کے لیے حکومت نے چین سے پاک چین اقتصادی راہداری(سی پیک)کا معاہدہ کیا ملک میں امن قائم کرنے کے لیے آپریشن کا فیصلہ کیا۔کراچی کے حالات پر بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جب(ن)لیگ کی حکومت آئی اس وقت حالات بڑے کشیدہ تھے تاہم سابق وزیراعظم نواز شریف نے ستمبر 2013میں کراچی میں تاجروں اور صنعت کاروں سے ملاقات کی اور انہیں کراچی آپریشن کے بارے میں آگاہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ امن اور سیاسی استحکام کے بغیر معیشت ترقی نہیں کرسکتی اور جو بھی استحکام اور امن کو خراب کرے گا وہ ملک سے دشمنی کرے گا۔2014میں اسلام آباد میں پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی)اور پاکستان عوامی تحریک (پی اے ٹی)کی جانب سے کیے جانے والے دھرنوں پر تنقید کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ دھرنوں کے باعث چینی صدر کا دورے کو ایک سال کے لیے مخر کرنا پڑا اور اس دورے میں تاخیر کی وجہ سے پاکستان کو 1 ارب ڈالر کا نقصان ہوا۔پاناما پیپرز کیس کے حوالے سے وفاقی وزیر داخلہ نے کہا کہ پاناما کیس کی وجہ سے اسٹاک مارکیٹ میں پاکستان کو 40 ارب ڈالر کا نقصان ہوا۔احسن اقبال کا کہنا تھا کہ اداروں کے درمیان کوئی ٹکرا ؤنہیں، ایک ٹرائیکا، چند ناکام سیاستدان، ریٹائرڈ فوجی افسر جو ٹی وی پر آکر دانشوری کرتے ہیں وہ یہ بتائیں کہ سکیورٹی حالات کیسے بہتر ہوں گے۔وفاقی وزیرداخلہ نے کہا کہ کچھ لوگ فوج اور (ن)لیگ کے درمیان جنگ چاہتے ہیں تاکہ ان کے لیے چور دراوازہ کھل جائے۔شیخ رشید کی جانب سے(ن) لیگ کے ایم این ایز کی مبینہ فہرست دکھانے کے سوال پر احسن اقبال کا کہنا تھا کہ میں بھی جیب سے کوئی کاغذ نکال کر کہہ سکتا ہوں کہ یہ پی ٹی آئی کے لوگ ہیں جو (ن)لیگ میں شامل ہورہے ہیں، شیخ رشید کے لیے پیغام ہے کہ اب (ن)لیگ پر کوئی نقب نہیں لگاسکتا، وہ جنوبی پنجاب کے لوگوں کی توہین کرنا بند کریں، شیخ رشید جوگر پہن کر دوڑنے کا کہتے ہیں، ہم نے تو انہیں خود ننگے پیر بھاگتے دیکھا ہے۔ انہوں نے کہ ٹرائیکا میں چند سیاست دان ،صحافی اور (ر)فوجی شامل ہیں جو حکومت اور فوج کے درمیان اختلاف پیداکررہے ہیں۔

احسن اقبال

نارووال( نمائندہ خصوصی)وفاقی وزیر داخلہ پروفیسر احسن اقبال نے کہا ہیہر ادارے کو اپنے حصہ کا کام کرنا ہو گاہمارا نظام عدل مثالی نہیں تو برا بھی نہیں ، اسے موثر بنانا ہو گا، پولیس کی تربیت کیلئے ٹھوس اقدامات کئے گئے ہیں ڈسٹرکٹ جیل نارووال کو جدید سہولیات سے آراستہ کرنااولین ترجیح ہے۔ پنجاب بھرکی طرح ڈسٹرکٹ جیل نارووال میں قیدیوں کی سہولت کے لئے کھیل کے میدان کے علا وہ قید یو ں کو صحت کی طبی سہو لت کے لیے بہترین ہسپتال قائم کیا گیا ہے اور ان تعلیم و تربیت کے لئے خصوصی انتظامات کئے گئے ہیں تا کہ وہ دورا ن اسیر ی تعلیم جیسی دو لت سے رو شنا س ہو سکیں۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے ڈسٹرکٹ جیل نارووال کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا جس میں صوبائی وزیر جیل خانہ جات پنجاب ملک احمد یار ہنجرا،آئی جی جیل خانہ جات مرزا شاہد سلیم بیگ،ڈی آئی جی جیل خانہ جات ملک مبشر خان،سپرنٹنڈنٹ جیل نارووال ملک صفدر نواز کے علاوہ ایم پی اے رامیش سنگھ اروڑا،چیئر مین ضلع کونسل احمد اقبال،ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر رانا علی ارشد کے علاوہ علاقہ بھر کے معززین نے تقریب میں شرکت کی۔وزیر دا خلہ نے کہا کہ نا رووا ل ڈسٹر کٹ جیل کے قیا م سے قید یو ں کی لو ا حقین کی مشکلا ت کم ہونگی۔وفا قی وزیر نے جیل انتظا میہ کو قیدیوں کے ساتھ ملاقاتیوں کے لئے بھی شیڈ قائم کر نے کی ہد ا یت کی ۔انہو ں نے کہا کہ نارووال کی جیل کا شما ر پنجا ب کی بہتر ین جیلو ں میں ہو گا ۔ صوبائی وزیر پنجاب جیل خانہ جات احمد یار ہنجرا نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب بھر کے اضلاع میں بین الا قوا می معیار کی جیلیں قائم کی گئی ہیں جہا ں پر قید یو ں کے لیے سنٹر سکو ل بھی بنا ئے گئے ہیں تا کہ قید ی معا شر ے کے مہذب شہر ی بن سکیں۔انہو ں کہا کہ پنجا ب حکو مت کی کا و شو ں سے اللہ تعا لی کے فضل سے پنجا ب بھر کی تما م جیلو ں کا نقشہ تبد یل ہو چکاہے۔صو با ئی وزیر نے کہا کہ پنجا ب بھر کی جیلیں اب سزا خا نہ نہیں بلکہ اصلا ح خا نہ بن چکی ہیں اور عنقر یب جیلو ں میں جیمرز بھی لگا ئے جا رہے ہیں اور اس کے سا تھ سا تھ قید یو ں کی سہو لت کے لیے جیلو ں میں ٹیلی فو ن کی سہو لت بھی فرا ہم کی جا رہی ہے مز ید جیلو ں میں قید یو ں کی نقل حمل کی چیکنگ کے لیے سی سی ٹی وی کیمرے نصب کیے جا رہے ہیں ۔وفا قی دا خلہ اور صو با ئی وزیر جیل خا نہ نے آئی جی اور ڈی آئی جی کے سا تھ جیل کے مختلف حصو ں کا تفصیلی معا ئنہ بھی کیا اور جیل میں قید یو ں کو جیل انتظا میہ کی طر ف سے دی جا نیوا لی سہو لیا ت کا بھی جا ئز لیا ۔ آئی جی جیل خانہ جات مرزا شاہد سلیم بیگ،ڈی آئی جی جیل خانہ جات ملک مبشر خان،سپرنٹنڈنٹ جیل نارووال ملک صفدر نواز نے بھی تقر یب سے خطا ب کیا ۔
احسن اقبال، نارووال

مزید : صفحہ اول

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...