انڈس موٹر کمپنی نے پہلی سہ ماہی کے مالی نتائج کا اعلان کردیا


کراچی (اکنامک رپورٹر)انڈس موٹر کمپنی لمیٹڈ کے مالی سال 2017-18 ء کی پہلی سہ ماہی کے لئے مورخہ27 اکتوبر ، 2017 ء کو منعقد ہوئے بورڈ اجلاس میں مذکورہ سہ ماہی کے لئے جو 30 ستمبر ، 2017ء کو ختم ہوئی ، کمپنی کی مالی اور آپریٹنگ کارکردگی کا جائزہ لیا گیا۔ ستمبر 30 ، 2017 ء کو ختم ہونے والی سہ ماہی میں انڈس موٹر کمپنی کی فروخت 15,354 یونٹس تھی، جب کہ گزشتہ سال اسی مدت میں یہ فروخت 14,542 یونٹس رہی تھی۔گزشتہ سال کے اسی عرصے میں پیداوار 14,851 یونٹس تھی جو اس سال کی پہلی سہ ماہی میں بڑھ کر 14,971 یونٹس تک جا پہنچی۔کمپنی کی سیلز کی آمدنی 31.2 بلین روپے رہی جو گزشتہ برس اسی عرصے میں رہنے والی آمدنی 25.8 بلین روپے سے 21 فیصد زائد ہے۔ 30 ستمبر 2017 ء کو ختم ہونے والی سہ ماہی میں منافع بعد از ٹیکس 3.6 بلین روپے ہے جو کہ گزشتہ برس اسی مدت کی سہ ماہی میں 3 بلین روپے تھا۔عبوری منافع منقسمہ 30 روپے فی حصص دیا گیا جب کہ گزشتہ سال اسی دورانئے میں فی حصص آمدنی 25 روپے تھی۔اس موقع پر تبصرہ کرتے ہوئے انڈس موٹر کمپنی کے سی ای او،علی اصغر جمالی نے کہا کہ پہلی سہ ماہی میں آٹو موبائل کی طلب زبردست رہی،جو میکرو اکنامکس سے متعلق مثبت انڈیکیٹرز، صارفین کے مثبت دلی جذبات اور کنزیومر کریڈٹ کی دستیابی کی وجہ سے مستحکم رہی۔گزشتہ تین ماہ میں ملک بھر میں مقامی طور پر تیار شدہ گاڑیوں میں پسنجر کاروں (PCs) اور لائٹ کمرشل وہیکلز (LCVs) کی فروخت 60,469 یونٹس رہی جو گزشتہ مالی سال2016-17 ء کی پہلی سہ ماہی میں رہنے والی فروخت 47,645 یونٹس کے مقابلے میں 27 فیصد زیادہ ہے۔تین سال کی مدت کے باوجود ، استعمال شدہ کاروں کی درآمد میں اضافہ ہوا ہے، اوریہ اب بھی موجودہ آٹو انڈسٹری کی ترقی کی راہ میں رکاوٹ بن رہے ہیں۔درحقیقت 23,854 یونٹس کی درآمد تاریخ میں سب سے زیادہ ہے جب کہ گزشتہ سال کی اسی مدت میں یہ تعداد 12,424 تھی۔پلانٹ کی پیداواری صلاحیت میں اضافے کے لئے کئی روپے کی سرمایہ کاری کی گئی ہے جس سے گزشتہ سال کی نسبت پیداواری صلاحیت میں اضافہ ہوگا۔اگست 2017 ء میں کمپنی نے ٹویوٹا کرولا کا Big Minor Model Change بے مثال سیفٹی اور لگژری خصوصیات کے ساتھ متعارف کرایا۔

 

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...