مسلم لیگ(ن)نے وفاقی حکومت پر سنگین الزام عائد کرتے ہوئے چیف جسٹس سپریم کورٹ سے نوٹس لینے کا مطالبہ کردیا 

مسلم لیگ(ن)نے وفاقی حکومت پر سنگین الزام عائد کرتے ہوئے چیف جسٹس سپریم کورٹ ...
مسلم لیگ(ن)نے وفاقی حکومت پر سنگین الزام عائد کرتے ہوئے چیف جسٹس سپریم کورٹ سے نوٹس لینے کا مطالبہ کردیا 

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان مسلم لیگ(ن) نے گلگت بلتستان کے چیف جسٹس اور چیف الیکشن کمشنر سے وفاقی حکومت کی جانب سے انتخابات سے قبل ہونے والی مبینہ دھاندلیوں اور مداخلت کا نوٹس لینے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ گلگت بلتستان کی حساسیت کو سمجھا جائے،سرکاری تنصیبات پرحملہ بد ترین دہشتگردی کے زمرے میں آتا ہے لیکن عمران خان نیازی کو چارجز فریم کئے بغیر نہ صرف باعز ت کر دیا گیا بلکہ انہیں انصاف کی ہوم ڈیلیوری دی گئی ہے،چیف جسٹس پاکستان سے اپیل ہے کہ اس کا نوٹس لیا جائے کیونکہ اس سے عوام کے دلوں میں انصاف کے نظام کے حوالے سے وسوسے پیدا ہونے کا اندیشہ ہے،اس واقعہ کا اسی طرح نوٹس لیا جائے جس طرح جج ارشد ملک کے کے واقعہ میں لیا گیا تھا،وزرا ء اپنی زبان کو لگام دیں اور اپوزیشن کو غداری کے سرٹیفکیٹ دینے کے بجائے بتائیں کہ کشمیر کا سودا کس سے اور کتنے میں کیا؟ .

مسلم لیگ(ن) کے سیکرٹری جنرل احسن اقبال نے مرکزی سیکرٹریٹ ماڈل ٹاؤن میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ گلگت بلتستان میں 15نومبر کو انتخابات ہونے ہیں لیکن گلگت بلتستان میں (ن) لیگ کی حکومت پر دو ماہ پہلے فنڈز پر پابندی لگا دی گئی جس پر وزیر اعلیٰ حافظ حفیظ الرحمن نے شدید تحفظات کا اظہار کیا،گلگت بلتستان میں وفاق نے دباؤ ڈالا اوروفاداریاں تبدیل کرائیں، نگران حکومت میں وفاقی وزیر امین گنڈا پور اور وزیراعظم الیکشن سیل نے نگران حکومت کے قواعد و ضوابط کی دھجیاں بکھیریں،26 اکتوبر کو علی امین گنڈا پور نے دو روز کیلئے ہر حلقے کادورہ کیا،مثبت نتائج کیلئے حکومتی مشینری کو استعمال کیا گیا،(ن) لیگ کی حکومت میں مثالی امن قائم ہوا،ایک شخص بھی فرقہ واریت اور دہشت گردی میں ہلاک نہیں ہوا،گلگت بلتستان میں پانچ سالوں میں کرپشن کا کوئی سکینڈل سامنے نہیں آیا بلکہ اس دور میں ریکارڈ ترقی ہوئی،ہمارا مطالبہ ہے کہ چیف الیکشن کمشنر نے جو ضابطہ اخلاق دیا ہے اس پر عمل کیاجائے، وفاقی حکومت کی مداخلت سے دن دیہاڑے دھاندلی کی مثال قائم کی جارہی ہے، گلگت بلتستان مسلم لیگ (ن) کا قلعہ ہے،اگر بیلٹ کی چوری اور فنڈز سے انتخابی نتایج پراثر انداز ہونے کی کوشش کی گئی تو بھرپوراحتجاج کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ دشمن گلگت بلتستان میں سی پیک کے روٹ کو نقصان پہنچانا چاہتا ہے، گلگت بلتستان کی حساسیت کو سمجھا جائے اور اس کے انتخابات میں مداخلت سے گریز کیا جائے، کیا مسلم لیگ(ن) ملک دشمن پارٹی ہے جو پاکستان کی بانی جماعت ہے؟ اگر اسے غدار قرار دیا جارہا ہے تو پھر اللہ ہی حافظ ہے،گلگت بلتستان کے چیف الیکشن کمشنر اورچیف جسٹس سپریم کورٹ سے درخواست کرتاہوں وفاقی حکومت کی پری پول رگنگ کاراستہ روکیں اور وفاق کی مداخلت کا نوٹس لیا جائے،انتخابات کے متنازعہ ہونے سے خطے میں ایک سیاسی بحران پیدا ہو جائے گا۔

مزید :

علاقائی -پنجاب -لاہور -