آج بھی ذمہ داران کو بلوچستان کا احساس نہیں ، ماضی سے سیکھیں ،معافیوں سے کچھ نہیں ہوگا: اخترمینگل کی پاکستان تحریک انصاف کی قیادت سے ملاقات

آج بھی ذمہ داران کو بلوچستان کا احساس نہیں ، ماضی سے سیکھیں ،معافیوں سے کچھ ...
آج بھی ذمہ داران کو بلوچستان کا احساس نہیں ، ماضی سے سیکھیں ،معافیوں سے کچھ نہیں ہوگا: اخترمینگل کی پاکستان تحریک انصاف کی قیادت سے ملاقات

  

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) بلوچ رہنماءاختر مینگل نے کہاہے کہ معافیاں بلوچستان کے مسائل کا حل نہیں ، اٹارنی جنرل کا عدالت میں رویہ بھی لیفٹیننٹ جنرل جیساہے ، اُن لوگوں کو آج بھی احساس نہیں ۔عمران خان نے کہاکہ سیاستدانوں کو ماضی سے سیکھناچاہیے اور جہاں گندہ پانی ہوتو وہیں مچھر آتاہے ۔ ملاقات میں پاکستان تحریک انصاف کی جانب سے عمران خان اور جاوید ہاشمی نے شرکت کی جس دوران بلوچستان میں امن وامان ، لاپتہ افراد اور سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال کیاگیا۔

ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے اختر مینگل کا کہناتھاکہ عمران خان نے ملاقات سے قبل اور ملاقات میں بھی اُن کے چھ نکات کی حمایت کی ۔اُنہوں نے کہاکہ بلوچستان پر بہت بات ہوچکی ہے اور سمجھنے والے سمجھ گئے ہیں ۔اُنہوں نے کہاکہ بلوچستان میں اگر کوئی مرتاہے تو اُس کی بھی جان ہے اور اگر یہی صورتحال رہی تو اب بلوچ لاشیں اُٹھا اُٹھا کر ملک کو قندھا دینے کے مزید قابل نہیں ہوسکتے ۔

عمران خان نے کہاکہ حکمران اپنی غلطیوں سے سیکھیں اور اگر انصاف نہیں کیاتو کوئی مستقبل نہیں ۔ سوئی گیس پورے ملک سے ہونے کے بعد بلوچستان میں جاتی ہے اور اگر کسی پر ظلم ہورہاہے تو اُن کو انصاف فراہم کریں نہ کہ آپریشن کردیں ۔اُنہوں نے کہاکہ گندہ پانی موجود ہوتو مچھر آتاہے ، اپنے اندر تبدیلی لائیں تاکہ دشمن نہ آسکے ، آنیوالے وقت میں بلوچستان میں تبدیلی لائیں گے ۔اُن کاکہناتھاکہ حکومت مکمل ناکام ہوچکی ہے اور اگر ایجنسیوں کا بھی مسئلہ ہے تو اُس کی ذمہ دار جمہوری حکومت ہی ہے ، کراچی اور بلوچستان میں رینجر تعینات ہے ۔اُنہوں نے کہاکہ سیاسی دور میں مسائل کا حل سیاست ہے ، آپریشن نہیں ۔

میڈیا کے سوالات کا جواب دیتے ہوئے اختر مینگل نے کہاکہ جمہوریت اور جرگے اکٹھے نہیں ہوتے ، دکھوں میں شریک ہونے پر تمام سیاسی جماعتوں کے شکر گزار ہیں اور یہ کافی نہیں کیونکہ معافیوں سے بلوچستان کے مسائل حل نہیں ہوسکتے ۔بلوچستان میں امن وامان کو خراب کرنے والوں کو آج بھی احساس نہیں اور اگر احساس ہوتاتو سپریم کورٹ میں اُن کا رویہ جارہانہ نہیں ہوتا، اٹارنی جنرل کا رویہ بھی لیفٹینٹ جنرل جیساہے ۔اخترمینگل نے کہاکہ ہم کمزور ہیں اور جانیں ہی قربان کرسکتے ہیں ، ہمارے آباﺅاجداد قربان کرتے آئے ہیں ۔اُنہوں نے کہاکہ ملک کے دیگر علاقوں میں کچھ دیر کے لیے گیس کی لوڈشیڈنگ ہوتو عوام سڑکوں پر آجاتے ہیں لیکن بلوچستان کی گیس ہونے کے باوجود صوبے میں کوئی انتظام نہیں ۔عمران خان نے کہاکہ تحریک انصاف نے ہمیشہ آپریشن کی مخالفت کی اور احتساب کا نظام لایاگیاتو لاپتہ افراد سے متعلق مسائل بھی حل ہوں گے ۔

مزید :

اسلام آباد -