کشکول توڑنے کی بات کرنے والوں نے بڑا کشکول اٹھا لیا: طاہر القادری

کشکول توڑنے کی بات کرنے والوں نے بڑا کشکول اٹھا لیا: طاہر القادری
کشکول توڑنے کی بات کرنے والوں نے بڑا کشکول اٹھا لیا: طاہر القادری

  

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)اسلام آباد دھرنے سے خطاب کرتے ہوئے پاکستان عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر طاہر القادری کا کہنا ہے کہ کشکول تور دینے کی بات کرنے والوں نے مزید بڑا کشکول اٹھا لیا ہے۔پاکستان کی تاریخ میں پہلی مرتبہ صوبہ پنجاب452 ارب روپے کا مقروض ہوا۔ہمیں بتائیں 452ارب روپے کہاں خرچ ہوئے۔ان خیالات کا اظہار ڈاکٹر طاہر القادری نے اسلام آباد میں جاری دھرنے کے شرکاءسے کرتے ہوئے کیا۔ان کا کہنا تھا کہ صوبہ پنجاب میں کرپشن کی انتہاءہو چکی ہے آج پنجاب میں 80 فیصد لوگ صاف پانی ، ادویات ، اور چھت جیسے بنیادی حقوق سے محروم ہیں جبکہ دوسری جانب نوجوان ہاتھوں میں ڈگریاں لیے نوکری کی تلاش میں مارے مارے پھر رہے ہیں۔آج بھی پنجاب میں ڈاکٹرز اور سرجنز کی 8000 آسامیاں خالی ہیں جن پر نوکریاں نہیں دی جا رہیں۔

آج حکمران ہر ہر کاروبار پر قابض ہیں اور جب کاروبار اور اقتدار ایک ساتھ ہوں تومعاشرے کے ساتھ انصاف نہیں ہو سکتا۔

بجلی کا ریٹ مقرر کرنے کے لیے نیپرا میں بی اے پاس شخص کو ایکٹنگ چیئرمین لگا کر اس کے ذریعے کرپشن کی جا رہی ہے جبکہ پورے صوبے میں مرغی کے گوشت کا ریٹ ان کا بیٹا طے کرتا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ کہ جمہوریت میں ہر کسی کو سوال پوچھنے کی اجازت ہوتی ہے لیکن یہ جمہوریت نہیں آمریت ہے۔لیکن آج عوام با شعور ہو چکی ہے۔اب ’گو نواز گو ‘کا نعرہ لگانے والے فقیر پر نوٹوں کی بارش کر دی جاتی ہے۔حکمرانوں کے دن گنے جا چکے ہیں اور اب ان کو اقتدار چھوڑکر جانا ہو گا۔

مزید : اسلام آباد