گمشدہ یونانی خانقاہ کی تلاش کے 100 سال بعد نقشہ غلط نکلا

گمشدہ یونانی خانقاہ کی تلاش کے 100 سال بعد نقشہ غلط نکلا
 گمشدہ یونانی خانقاہ کی تلاش کے 100 سال بعد نقشہ غلط نکلا

  

ایتھینز(مانیٹرنگ ڈیسک)ایک گمشدہ یونانی خانقاہ کی تلاش کا کام کرنے والے ماہر آثار قدیمہ کے ایک گروہ نے ایک سو سال سے زائد عرصہ تلاش کا کام کرنے کے بعد ختم کر دیا کیونکہ اس جگہ کا قدیم نقشہ غلط تھا۔یونان کے سرکاری نشریاتی ادارے ای آر ٹی کے مطابق ’سنہ 1964 میں اوبوئیا جزیرے میں اریٹریا کے مقام پر یونانی اور سوئس ٹیم نے کھدائی کا کام شروع کیا، جہاں دیگر ماہر آثار قدیمہ 19ویں صدی سے بے سود کھدائی کرتے رہے تھے۔‘انھیں یونانی دیوی ارتمس کے مندر کی تلاش تھی، جس کا شمار قدیم یونان کے معزز ترین دیویوں میں ہوتا تھا، اور جیوگرافر سٹرابو کے مطابق ان کا انتقال پہلی صدی عیسوی میں ہوا تھا۔سوئس ریڈیو اور ٹیلی ویڑن کے مطابق ان کا کہنا تھا کہ ایک مقدس مقام قدیم اریٹریا سے سات یونانی سٹیڈز (تقریباً ایک میل) کے فاصلے پر واقع ہے۔ لیکن سوئس ماہر آثار قدئمہ ڈینس کنوپفلر نے دریافت کیا کہ اس دور کی یونانی عمارتوں کے ملنے والے پتھر بازنطینی چرچ میں دوبارہ استعمال ہوئے اور سترابو کو حساب کتاب میں غلطی ہوئی تھی۔

ان کے خیال میں یہ فاصلہ 11 کلومیٹر کا ہے۔چنانچہ سوئس آرکیولوجیکل سکول اور گریک آرکیالوجیکل سروس نے امرینتھوس میں پہاڑی کے دامن میں ایک چھوٹے سے گاؤں میں کھدائی کا کام شروع کیا۔

مزید :

میٹروپولیٹن 4 -