ہاتھوں کی مدد سے پہاڑوں پر چڑھنے والی خاتون

ہاتھوں کی مدد سے پہاڑوں پر چڑھنے والی خاتون

  

بیجنگ(مانیٹرنگ ڈیسک)الین رابرٹ کے نام سے تو آپ واقف ہی ہوں گے۔ فرانس سے تعلق رکھنے والا یہ شخص رسی یا دوسرے اوزاروں کی مدد کے بغیر محض ہاتھ پاؤں کے ذریعے چٹانوں اور فلک بوس عمارتوں پر چڑھنے کے لیے شہرت رکھتا ہے۔الین مختلف ممالک کی مشہور عمارتیں سَر کر چکا ہے جن میں مشہور زمانہ برج خلیفہ بھی شامل ہے۔ جرات اور بے خوفی سے آراستہ منفرد ٹیلنٹ کی بنا پر وہ اسپائیڈرمین کی عرفیت سے مشہور ہوچکا ہے۔ الین کی طرح کئی اور افراد بھی اس ٹیلنٹ کے مالک ہیں مگر اس فیلڈ میں عورت صرف ایک ہی ہے۔لْو ڈینگ پنگ کا تعلق چین کے صوبے گوئیڑو سے ہے۔ وہ سو میٹر اونچی عمودی چٹان پر محض ہاتھ پاؤں سے کام لیتے ہوئے چڑھ جاتی ہے۔ لْوڈینگ کا تعلق جنوب مغربی چین کے پہاڑی علاقے میں بسنے والے میاؤ قبیلے سے ہے۔ چٹانوں اور پہاڑیوں پر چڑھنے کی تربیت قبیلے کے لوگ بچپن ہی سے حاصل کرنے لگتے تھے۔ اس کی وجہ وہ قدیم روایت تھی جس کے تحت مْردوں کو پہاڑی چوٹی پر بنے غاروں میں رکھ دیا جاتا تھا۔ وقت کے ساتھ ساتھ یہ روایت اہمیت کھونے لگی اور مْردوں کو زمین دفن کیا جانے لگا مگر مرد پھر بھی روزانہ پہاڑیوں اور چٹانوں پر چڑھا کرتے تھے۔ اس کی وجہ جڑی بوٹیوں کی تلاش تھی جن کی فروخت سے وہ اپنا اور اہل خانہ کا پیٹ پالتے تھے۔

مزید :

صفحہ آخر -