انتہائی معصوم نظر آنے والے بچے کا خود کش حملہ، ہر طرف افراتفری پھیلادی، لیکن اسے اس کام پر کس طریقے سے تیار کیا گیا تھا؟ حقیقت جان کر آپ کا بھی منہ حیرت کے مارے کھلا کا کھلا رہ جائے گا

انتہائی معصوم نظر آنے والے بچے کا خود کش حملہ، ہر طرف افراتفری پھیلادی، لیکن ...
انتہائی معصوم نظر آنے والے بچے کا خود کش حملہ، ہر طرف افراتفری پھیلادی، لیکن اسے اس کام پر کس طریقے سے تیار کیا گیا تھا؟ حقیقت جان کر آپ کا بھی منہ حیرت کے مارے کھلا کا کھلا رہ جائے گا

  

دمشق (مانیٹرنگ ڈیسک) عراق اور شام میں شدت پسند تنظیم داعش کی شکست کے دعوے تو ضرور کئے جارہے ہیں لیکن حال ہی میں سامنے آنے والی ایک لرزہ خیز ویڈیو سے پتہ چلتا ہے کہ اس تنظیم کی سفاکانہ کارروائیاں جوں کی توں جاری ہیں۔ میل آن لائن کے مطابق داعش کی جانب سے جاری کی جانے والی اس ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ کس طرح کمسن بچوں کا دماغ ماﺅف کر کے ان سے خودکش حملے کروائے جاتے ہیں۔

اس ویڈیو میں انتہائی معصوم صورت والا ایک بچہ نظر آتا ہے، جو یقینا پوری طرح اپنے ہوش و حواس میں نہیں ہے، جو بارود سے بھری گاڑی کے ذریعے شامی فوج پر خود کش حملہ کرتا ہے اور اس حملے میں اس کے اپنے ننھے جسم کے بھی چیتھڑے اڑ جاتے ہیں۔

شمالی کوریا کے سربراہ کم جانگ اُن کی بہن فحش اداکارہ؟ ایسا کام ہوگیا کہ وہ غصے میں آکر واقعی امریکہ پر ایٹم بم چلادیں گے

ویڈیو میں داعش کا ایک شدت پسند کمسن لڑکے کو ہدایات دیتا ہے کہ اس نے بارود سے بھری گاڑی کو شامی فوجیوں کے قریب لیجا کر ایک بٹن دبانا ہے تا کہ وہ اپنا مشن مکمل کر سکے۔ لڑکے کے چہرے پر کوئی تاثرات نظر نہیں آتے جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ اسے خود کش حملے سے پہلے نشہ آور ادویات دی گئی ہیں۔ اس سے پہلے بھی کئی رپورٹوں میں یہ انکشاف سامنے آچکا ہے کہ داعش کے شدت پسند کمسن لڑکوں کو ذہنی طور پر مفلوج کرنے کیلئے ’زولام‘ نامی نشہ آور دوا کا استعمال کرتے ہیں۔ داعش کی قید سے فرار ہونے والے ایک 15 سالہ لڑکے نے بھی 2014ءمیں ٹی وی چینل سی بی ایس کو دئیے گئے انٹرویو میں بتایا تھا کہ وہ خود کش بمباروں کو ایک ایسی دوا کھلاتے ہیں جس کے بعد ان کا دماغ ان کے قابو میں نہیں رہتا۔ پھر وہ انہیں خود کش جیکٹ پہناتے ہیں اور کہیں بھی جاکر حملہ کرنے کو کہتے ہیں، جس پر وہ لڑکے سوچے سمجھے بغیر عمل کر گزرتے ہیں۔

اس ویڈیو میں نظر آنے والا لڑکا بھی ذہنی طور پر بے بس نظر آتا ہے۔ داعش کا کارکن اسے بارود سے بھری گاڑی میں بٹھا کر ہدف کی طرف روانہ کرتا ہے اور پھر کچھ دیر بعد صحراءمیں آگ کا ایک بڑا بگولا اور دھویں کے مرغولے اٹھتے دکھائی دیتے ہیں۔ لڑکے نے اپنے ہدف پر پہنچ کر خود کش دھماکہ کردیا تھا۔ یہ واضح نہیں کہ اس حملے میں شامی فوج کے کتنے اہلکار نشانہ بنے تاہم ویڈیو میں یہ دعویٰ ضرور کیا گیا ہے کہ یہ آپریشن کامیاب رہا۔

مزید :

بین الاقوامی -