دفعہ370کی منسوخی کا مطلب ہمارا پرچم اتار دیا جائے گا

دفعہ370کی منسوخی کا مطلب ہمارا پرچم اتار دیا جائے گا

  



گاندربل(کے پی آئی)نیشنل کانفرنس کے صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے واضح کیا ہے کہ ان کا بھاجپا لیڈر نریندر مودی کی ذات سے کوئی اختلاف نہیں بلکہ جموں کشمیر کے سلسلے میںان کے ایجنڈے کو لیکر خدشات لاحق ہیں۔گذشتہ روز ریلی کے شرکا ءسے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر عبداللہ نے کہاکہ انہیں نریندر مودی کے ساتھ بحیثیت ایک فرد کوئی اختلاف نہیں ہے ، البتہ کشمیر کے بارے میں ان کے ایجنڈے کو لیکر طرح طرح کے خدشات ہیں۔اس ضمن میں ان کا کہنا تھامودی کیا چاہتا ہے؟ہم اسکے خلاف کیوں ہیں؟ہم بحیثیت ایک شخص اسکے خلاف نہیں ہیں بلکہ اس کی نیت کے خلاف ہیں۔انہوں نے کہا کہ مودی کا پہلا ایجنڈا دفعہ370کا خاتمہ ہے جو جموں کشمیر کو خصوصی درجہ دیتا ہے اور کشمیری اس کے خاتمے کو قبول نہیں کریں گے۔

ڈاکٹر فاروق نے وضاحت کرتے ہوئے کہادفعہ370کی منسوخی کا مطلب یہ ہے کہ ہمارا پرچم اتار دیا جائے گا، ہمارا آئین منسوخ ہوگااور ہمیں ان کا غلام بنادیا جائے گا ، جموں کشمیر کے لوگ اسے کسی بھی صورت میں تسلیم نہیں کریں گے۔انہوں نے کہا کہ مودی کے ایجنڈا میں شامل ایک اور معاملہ مسلمانوں کے لئے بحیثیت مجموعی ایک تشویش کی بات ہے۔اس ضمن میں ان کا کہنا تھادوسرا مسئلہ انتہائی سنگین ہے، وہ(مودی) شرعی قوانین کو نظر انداز کرکے یونیفارم سول کوڈ نافذ کرنا چاہتے ہیں جو ہندوﺅں، مسلمانوں، سکھوں اور دیگر مذاہب کے لوگوں پر لاگو ہوگا،یہ مسلمانوں کے لئے ناقابل قبول ہے۔اس دوران نیشنل کانفرنس سینئر لیڈر اور کابینہ وزیر میاں الطاف احمد نے کہا ہے کہ نیشنل کانفرنس کی موجودہ سرکار میں ضلع گاندربل میں جتنی ترقی ہوئی ہے ، وہ واقعی تاریخی ہے۔ انہوں نے کہاکہ عمر عبداللہ حکومت نے گاندربل کا نقشہ ہی تبدیل کردیا اور آج ہم دیکھ سکتے ہیں کہ یہاں نہ صرف تعمیر و ترقی ہوئی ہے یہ ضلع ایک تجارتی مرکز کے بطور بھی ابھر کر سامنے آرہا ہے۔ انہوں نے عوام سے اپیل کی کہ وہ نیشنل کانفرنس امیدواروں کے حق میں ووٹ ڈالے کے کشمیریت کو زندہ رکھنے میں اپنا کردار ادا کریں کیونکہ سوداگروں کی ایک جماعت بی جے پی کے ساتھ مل کر ریاست جموں وکشمیر کی خصوصی پوزیشن کو ختم کرنے کے در پے ہے۔ انہوں نے کہا کہ ضلع گاندربل نیشنل کانفرنس کا مضبوط قلعہ رہا ہے اور انشا اللہ لوگوں کے بھر پور تعاون سے ڈاکٹر فاروق عبداللہ کو آنے والے لوک سبھا انتخاب میں بھاری اکثریت ضلع کے عوام اپنی ووٹ دیکر کامیاب بنائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ عمر عبداللہ حکومت میں گاندبل میں سنٹرل یونیورسٹی کا قیام، 400بستر والا سب ڈسٹرکٹ ہسپتال، منی سکریٹریٹ، 650کروڑ کا منی پاور پروجیکٹ ، سکول، سڑکیں ، طبی مراکز انہی کی کوششوں اور کاوشوں کا نتیجہ ہے۔ اس موقعے پر کانگریس کے سابق ایم ایل سی حاجی علی محمد بٹ، سجاد شاہین، صدرِ ضلع نیشنل کانفرنس حاجی عبدالرحمن میراور یوتھ لیڈرفاروق گاندربلی کے علاوہ بلاک صدور صاحبان بھی موجود تھے۔ اس کے بعد فاگ کھلمو میں بھی ایک چناوی جلسہ کا انعقاد ہوا، جس میں پارٹی کے سینئر لیڈر اور کابینہ وزیر میاں الطاف احمد نے خطاب کرتے ہوئے عوام سے ڈاکٹر فاروق عبداللہ کے حق میں ووٹ دینے کی اپیل کی۔

مزید : عالمی منظر


loading...