یوکرین تنازعہ ،امریکہ نے روس پرمزید پابندیاں لگا دیں

یوکرین تنازعہ ،امریکہ نے روس پرمزید پابندیاں لگا دیں

  



                                                                                             واشنگٹن(آن لائن)امریکانے روس کی مزید7 شخصیات اور17 کمپنیوں پرپابندی لگادی۔واشنگٹن میں محکمہ خارجہ کی ترجمان جین ساکی نے صحافیوں کوبتایاکہ روسی صدرولادیمرپیوٹن سے تعلق رکھنے والی 7 اہم شخصیات اور17 روسی کمپنیوں پرپابندی لگادی گئی ہے جبکہ روس کومختلف اشیا برآمد کرنے والی امریکی کمپنیوں کے لائسنس بھی معطل کیے جارہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ امریکا واضح کردیناچاہتاہے کہ یوکرین کے تنازع کے حل کے لیے جنیوا معاہدے کے تحت ٹھوس اقدامات نہ کرنے پر روس پر مزید پابندیاں لگائی جاسکتی ہیں۔ انہو ں نے کہا کہ روس پر مزید پابندیاں ’ماسکو کی جانب سے یوکرین میں غیر قانونی مداخلت‘ کے باعث عائد کی گئی ہیں۔جن پر پابندیاں عائد کی گئی ہیں ان میں سے ایک ایگور سیچن ہیں جو آئل کمپنی روزنیفٹ کے سربراہ ہیں اور دوسرے ہیں سرگئی کیموزوف جو ٹیکنانالوجی کی کمپنی روزٹیک کے سربراہ ہیں۔اس سے قبل یوکرین میں جاری بحران کے پیش نظر یورپی یونین کے سفارت کاروں کی ملاقات ہونی ہے جس میں وہ روس کے خلاف مزید پابندیوں پر غور کریں گے۔اس ملاقات کے دوران جاری پابندیوں میں توسیع کا فیصلہ کیا جائے گا اور مزید روسی اہلکاروں کو ان کی زد میں لایا جائے گا۔واضح رہے کہ امریکہ اور ترقی یافتہ ممالک کی تنظیم جی 7 بھی روس کے خلاف مزید اقدامات کا منصوبہ بنا رہی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ روس یوکرین کو غیر مستحکم کر رہا ہے۔یورپی یونین کے 28 رکن ممالک کے سفارتکار کو روس اور مخصوص روسی افراد کے خلاف پابندیوں میں توسیع پر غور و خوض کے لیے ملاقات کر رہے ہیں۔برطانوی وزیر خارجہ ولیم ہیگ نے کہا کہ ’بحث ابھی بھی جاری ہے تاہم پابندیوں میں اضافے کا امکان ہے۔‘ ابھی جو پابندیاں عائد ہیں ان میں متعدد لوگوں کے سفر پر پابندیاں اور اثاثے منجمد کرنا شامل ہے۔انھوں نے کہا کہ ’ہم ان میں جتنے نام شامل کرتے جائیں گے روسی کی معیشت کو اتنا ہی نقصان پہنچے گا۔

مزید : عالمی منظر


loading...