ہماری تحریک کا حکومت اور فوج کے درمیان تناؤ سے کوئی تعلق نہیں ،عمران خان

ہماری تحریک کا حکومت اور فوج کے درمیان تناؤ سے کوئی تعلق نہیں ،عمران خان

  



اسلام آباد(اے این این) تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ 11مئی کو شروع ہونے والی ہماری تحریک کا حکومت اور فوج کے درمیان تناؤ سے کوئی تعلق نہیں، ہم مارشل لاء کی بات نہیں کررہے، جمہوریت کی مضبوطی کیلئے انتخابی نظام کو درست کرنا چاہتے ہیں، ایک سال پہلے کہہ دیا تھا انصاف نہ ملا تو سڑکوں پر نکلیں گے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے اسلام آباد میں ملک بھر سے ضلعی سطح کی قیادت سے ملاقات کے بعد میڈیا سیگفتگو کرتے ہوئے کیا۔ عمران خان نے زور دے کر کہا کہ سابق چیف جسٹس کی جانب سے ریٹرننگ افسران سے خطاب اور میڈیا ہاؤس کی جانب سے جزوی نتائج کی موصولی کے بعد ایک خاص جماعت کے حق میں مہم جوئی کی تحقیقات کی جائے اور دھاندلی میں ملوث عناصر کو بے نقاب کیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ گزشتہ ایک برس کے دوران تحریک انصاف نے ہمیشہ دھاندلی کے خلاف آواز بلند کی، تمام قانونی چارہ جوئی بروئے کار لاتے ہوئے انتخابی ٹربیونل سے رجوع کیااور ملک کی اعلیٰ عدالت کا دروازہ بھی کھٹکھٹایا تاہم نا تو ہمارے جائز مطالبات تسلیم کیے گئے اور نہ ہی انتخابی نظام کی اصلاح کیلئے کوئی کوشش کی گئی۔ انہوں نے زور دے کر کہا 11مئی کو ایک برس مکمل ہونے پر دھاندلی کے خلاف بھرپور تحریک کاآغاز کرینگے اور ملک میں صاف شفاف انتخابات کے ذریعے جمہوریت کے قیام کی راہ ہموار کرنے کیلئے بھرپور جدوجہد کرینگے۔ انہوں نے واضح کیا کہ جمہوریت بہترین نظام حکومت ہے اور تحریک انصاف کسی صورت ماورائے آئین اقدامات کی حمایت نہیں کرتی تاہم جمہوریت کی آڑ میں شخصی یا خاندانی آمریت کی بھی اجازت نہیں دینگے اور عوام کے بنیادی آئینی اور جمہوری حقوق کا تحفظ کرتے ہوئے موثر جمہوری نظام کیلئے آزاد اور خود مختار الیکشن کمیشن کے قیاماور صاف شفاف انتخابات کیلئے آئینی و جمہوری راستہ اختیار کرینگے۔ ایک سوال کے جواب میں چیئرمین تحریک انصاف نے کہا کہ ملک میں حقیقی جمہوریت کے قیام تک بد عنوانی اور بدانتظامی کا تدارک ممکن نہیں۔اس سے قبل پارٹی عہدیداران سے اپنے خطاب میں چیئرمین تحریک انصاف نے کہا کہ جمہوریت اور ملک کے مفاد میں انتخابات تسلیم کیے تاہم دھاندلی بالکل گوار نہیں کرینگے۔ حکمرانوں کو قوم کو آزاد، خود مختار الیکشن کمیشن اور نقائص سے پاک انتخابی نظام دینا ہوگا۔ کارکنان قوم کا مستقبل محفوظ بنانے کیلئے کمر بستہ ہو جائیں اور عظیم الشان جدوجہد کے آغاز کی تیاری کریں۔ اپنے خطاب میں چیئرمین تحریک انصا ف نے اعلی عدلیہ کو مخاطب کرتے ہوئے درخواست کی کے وہ چار حلقوں میں نتائج کی جانچ کے ذریعے دھاندلی بے نقاب کرنے میں اپنا کردار ادا کریں۔ انہوں نے نشان دہی کی کہ آئین شہریوں کے بنیادی حقوق کا ضامن ہے اعلی عدلیہ معاملے پر کسی درخواست کا انتظار کیے بغیر وسیع تر عوامی اور قومی مفاد میں از خود کارروائی کی بھی مکمل مجاز ہے ۔ انہوں نے حکومت کو متنبہ کیا کہ اگر گیارہ مئی تک ہمارے جائز مطالبات کو اہمیت نہ دی گئی اور انتخابات میں دھاندلی کی تحقیقات کے حوالے سے اقدامات نہ اٹھائے گئے تو گیارہ مئی کو آئندہ کے لائحہ عمل کا اعلان کرینگے اور اپنے مقاصد کے حصول تک سڑکوں پر رہینگے۔ پاکستان تحریک انصاف کے وائس چیئرمین شاہ محمود قریشی، صدر جاوید ہاشمی،سیکرٹری جنرل، جہانگیر ترین، ایڈیشنل سیکرٹری جنرل سیف اللہ خان نیازی،ترجمان چیئرمین تحریک انصاف نعیم الحق، مرکزی سیکرٹری اطلاعات ڈاکٹر شیریں مزاری،سنئیر نائب صدر عامر محمود کیانی، تحریک انصاف پنجاب کے صدر اعجاز چوہدری ، تحریک انصاف خیبرپختونخواہ کے صدر اعظم خان سواتی سمیت مرکزی، صوبائی اور مقامی قیادت نہ بھی اجلاس میں شرکت کی۔

مزید : صفحہ اول