18ویں ترمیم کے بعد منشیات کے عادی افراد کی بحالی کی ذمہ دار صوبائی حکومت ہے ۔لاہور ہائیکورٹ

18ویں ترمیم کے بعد منشیات کے عادی افراد کی بحالی کی ذمہ دار صوبائی حکومت ہے ...

  



                                           لاہور(نامہ نگار خصوصی ) لاہور ہائی کورٹ کے مسٹر جسٹس محمد فرخ عرفان خان نے منشیات کے عادی افراد کی بحالی کے لئے سرکاری سطح پرمﺅثر اقدامات نہ کرنے پر سیکرٹری ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن اور اینٹی نارکوٹکس فورس پنجاب کے سربراہ کو طلب کرلیا ۔فاضل جج نے یہ کارروائی ردا قاضی کی درخواست پر کی ہے ۔عدالت نے اس کیس میں وزارت داخلہ کی طرف سے عدالتی سوالات کا معقول جواب نہ دینے کا بھی نوٹس لیا ہے اور خبر دار کیا ہے کہ آئندہ تاریخ سماعت پر مفصل تحریری جواب داخل نہ کیا گیا تو عدالت وفاقی وزیر داخلہ اور سیکرٹری داخلہ کو طلب کرنے پر مجبور ہوگی۔عدالت نے ڈپٹی اٹارنی جنرل کی طرف سے عدالت میں کرائی گئی یقین دہانی پر عمل درآمد نہ کرنے کے حوالے سے بھی قرار دیا ہے کہ مدعا علیہان نے اپنا رویہ تبدیل نہ کیا تو ذمہ داروںکے خلاف توہین عدالت کی کارروائی عمل میں لائی جائے گی ۔فاضل جج نے پنجاب میں نشہ کے عادی افراد کے علاج کی سہولتوں ، حکومت کی طرف سے کئے گئے اقدامات اورغیر سرکاری رفاہی تنظیموں کے کردار کے حوالے سے تفصیلی رپورٹ طلب کی ہے ۔فاضل جج نے قرار دیا کہ اٹھارھویں آئینی ترمیم کے بعد منشیات کے عادی افراد کی معاشرے میں بحالی کی ذمہ داری صوبائی حکومت پر عائد ہوتی ہے ۔2011سے اس حوالے سے عدالت نے متعدد احکامات جاری کئے لیکن ان پر عمل درآمد نہیں کیا گیا ۔اس کیس کی مزید سماعت آج ہوگی۔

ذمہ دار

مزید : صفحہ آخر


loading...