سعودی عرب کی ناروے پرتنقید

سعودی عرب کی ناروے پرتنقید
سعودی عرب کی ناروے پرتنقید

  



جنیوا (بیورو رپوٹ ) سعودی عرب نے ناروے میں انسانی حقوق کے متعلق ریکارڈ پر تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ ناروے اپنے مسلمان شہریوں کے تحفظ اور نبی کریم کی گستاخی کے واقعات پر قابو پانے میں ناکام ہے۔ مذہب اور حضرت محمدﷺ  پر تنقید کو غیر قانونی قرار دیا جائے۔ ناروے میں تشدد، جنسی زیادتی کیسز، سرمائے کی غیرمنصفانہ تقسیم اور مسلمانوں کے خلاف منفی رویہ پر بھی شدید تحفظات ہیں۔ سعودی نمائندے کی طرف سے ان خیالات کا اظہار سکینڈے نیوین ممالک میں انسانی حقوق کے جائزہ کے لئے بلائے گئے اقوام متحدہ کے اجلاس میں کیا۔ اس موقع پر موجود روسی نمائندے نے بھی ناروے میں مذہبی عدم برداشت اور چائلڈ ویلفیئر سسٹم پر تنقید کرتے ہوئے اسے اصلاحی سہولیات کو بہتر بنانے پر زور دیا۔ اس معاملہ پر نارویئن وزیر خارجہ بورگ برینڈے کا موقف ہے کہ ” ناروے کے بارے میں یہ سب باتیں چھوٹ کا پلندہ ہیں“۔ قبل ازیں ہیومن رائٹس واچ نے اپنی ایک رپورٹ میں کہا تھا کہ 2012ءمیں سعودی حکومت کی طرف سے پُرامن غیرمقلدوں کی گرفتاریوں میں اضافہ کیا گیا۔ سعودی حکام 9ملین سعودی خواتین اور 9 ملین غیرملکی ورکرز کے حقوق کا تحفظ کرنے میں بھی ناکام رہی ہے۔

مزید : بین الاقوامی


loading...