ٹی بی کے مریض کو کرونا ثابت کرنیوالوں کو سزا دی جائے،سید کمال شاہ

ٹی بی کے مریض کو کرونا ثابت کرنیوالوں کو سزا دی جائے،سید کمال شاہ

  

تخت بھائی (تحصیل رپورٹر) امن جرگہ خیبر پختونخوا کے چیرمین سید کمال باچا نے کہا ہے کہ پانچ دن قبل وفات پا جانے والے ٹی بی مریض کو کرونا وائرس مریض ٹیسٹ سے پہلے ثابت کرنے والے ذمہ دار اہلکاروں کو قرار وقعی سزا دی جائے اور امن جرگہ اس کے خلاف 30 اپریل کومردان پریس کلب میں متاثرہ خاندان کے ہمراہ پریس کانفرس کریں گے اور بعد میں پشاور ہائی کورٹ میں باقاعدہ کس بھی دائر کریں گے ہم ایسے ظلم کو کھبی برداشت نہیں کرتے اور جہاں بھی ظلم ہو تو امن جرگہ وہاں پہنچ کر ظالموں کے خلاف میدان میں اترنے سے دریغ نہیں کریں گے انہوں نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ابھی تک نہ کوئی حکومتی اہلکار ایم این اے اور صوبائی اسمبلی کے ارکین نے رابطہ کیا ہے انہوں نے صوبائی حکومت سے مطالبہ کیا کہ جان بحق ہونے والے مریض کے خاندان کے ساتھ مالی مدد کی جائے ان خیالات کا اظہار انہوں نے منگل کے روز علاقہ ڈھکو بابا میں کرونا وائرس کے نام پر جان بحق ہونے والے عنایت اللہ گل ولد بادام گل کی تعزیت کے موقع پر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا اس موقع پر امن جرگی ضلع مردان کے صدر سید رحیم باچا،جہانگیر خان اور جان بحق ہونے والے نوجوان کے والد اور بچوں سمیت خاندان کے دیگر افراد اور معززین علاقہ بھی موجود تھے انہوں نے کہا کہ عنایت اللہ گل 2009سے سینے کی بیماری میں مبتلا تھے اور اسی وقت سے چسٹ سپلشٹ ڈاکٹرعنبر شاہ سے علاج کراتے تھے لیکن انتہائی مفلسی کی وجہ سے عنایت اللہ گل کوہاٹ میں کرش مشین میں مزدوری کرتا تھا بیمار ہوا اور انہوں نے مقامی ہسپتال تخت بھائی علاج کے لئے گئے انہوں نے کہا کہ تخت بھائی ہسپتال نے فوری طور ایم ایم سی منتقل کر دیا اور ان سے کرونا وائرس کی تشحیص کے لئے نمونے حاصل کر لئے لیکن افسوس کی بات یہ ہے کہ ان کو کرونا وائرس کی تصدیق اور رزلٹ سے پہلے پہلے کرونا وارڈ میں داخل کردیا انہوں نے کہا کہ ان کے ساتھ دیگر رشتہ دار بھی ملاقات کرانے نہیں دیتے انہوں نے مزید کہا کہ ایک دن بعد عنایت اللہ گل اللہ کو پیارے ہوگئے اور انتظامیہ نے ان کی لاش کو تحویل میں لیکر کرونا وائرس جیسا مریض کی طرح ان کی تدفین کر لی ہے اور ان کے گھر والوں کو میت کی اخری دیدار تک نہیں کرائی گئی ظلم کی انتہا ہے انہوں نے کہا کہ جس بے دردی سے ان کو دفنایا گیا وہ سراسر انسانیت کی خلاف ہیں اور مرنے کے ایک دن بعد ان کا ٹیسٹ نگیٹو آیا ہے انہوں نے کہا کہ اب ان کا آزالہ کون کرے گا اس موقع پر انکے والد اور دوسرے رشتہ دار وں کا کہنا تھا کہ علاقے لوگ ہمارے ساتھ ملاقات کرنے سے کتراتے تھے اور ہم بار بار علاقے کے لوگوں کو یہی کہتے تھے کہ میرے بیٹے کو کرونا کی بیماری نہیں ٹی بی اور سینے کی بیماری تھی ہم سب پر قیامت گزارہ انہوں نے مزید کہا کہ رمضان المبارک کے بابرکت مہینے میں ہمارے ساتھ انتظامیہ نے ظلم و جبر کی ہم حکومت وقت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ انصاف دیں امن جرگہ خیبر پختونخوا کے صدر سید کمال باچا نے دہمکی دی کہ اگر متاثرہ خاندان کو فوری طور انصاف نہ دیا گیا اور انکی مالی مدد نہ کی گئی تو ہم سڑکوں پر انے سے بھی دریغ نہیں کریں گے انہوں نے کہا کہ 30اپریل کو پریس کانفرس میں ائندہ کا لائحہ عمل کا اعلان کریں گے

مزید :

پشاورصفحہ آخر -