حکومت مساجد کے بجائے پبلک مقامات ادارے بند کرے، سیدذیشان اختر

  حکومت مساجد کے بجائے پبلک مقامات ادارے بند کرے، سیدذیشان اختر

  

بہاولپور(ڈسٹرکٹ رپورٹر)نائب امیر صوبہ جماعت اسلامی جنوبی پنجاب سید ذیشان اخترنے کہا ہے کہ و زیر اعظم پاکستان اللہ(بقیہ نمبر26صفحہ6پر)

تعالیٰ کے گھروں کو بند کرنے کے ا علان سے پہلے وزیر اعظم ہاؤس، منڈیاں، فیکٹریاں، کارخانے بھی بند کریں۔ مساجد سب سے زیادہ صاف، منظم اور مطاہر جگہ ہے جہاں بیماریوں کے پھیلنے کے سب سے کم امکانات ہیں۔ حکمران مساجد کی بندش سے پہلے ان جگہوں کو بند کرنے پر توجہ دیں جہاں ناتو طہارت اور صفائی کا نظام ہے اور نہ ہی نظم و نسق کا۔وہ ٹی وی اینکرز اور دانش وار جو رمضان المبارک میں مساجد کی بندش پرزور لگا رہے ہیں۔ وہ اپنے ایئرکنڈیشن کمروں سے نکل کر ملک کی منڈوں، خارخانوں،میٹھائی، بیکری کا سامان بنانے والی فیکٹریوں اور شہر میں موجود بڑے شاپینگ مالز اور و دیگر اسے اداروں کا دورہ کریں اور دیکھیں کہ وہاں انسانوں کی بھیڑ مصروف عمل ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ حکمران اگر کورونا پھیلاؤں کی وجہ سے مساجد بند بھی کرنا چاہتے ہیں تو پھر پبلک مقامات اور اداروں کو پہلے بند کیا جائے اور مساجد کو سب سے آخر میں بند کیا جائے۔ مساجد رب کائنات کی عبادت کا مرکز،اللہ تعالیٰ سے مدد اور مغفرت کا ذریعہ ہے۔

ادارے

مزید :

ملتان صفحہ آخر -