2افراد قتل، حادثات میں 5جا ں بحق، نوجوان کی خود کشی

  2افراد قتل، حادثات میں 5جا ں بحق، نوجوان کی خود کشی

  

ملتان،رحیم یارخان، کوٹ ادو، وہاڑی، صادق آباد(نیوز رپورٹر، بیورورپورٹ، تحصیل رپورٹر، نامہ نگار)دکان کے باہر بنچ رکھنے کی رنجش پر،ملزم نے قینچی کے وار (بقیہ نمبر21صفحہ6پر)

کر کے عمر رسیدہ شخص کو موت کے گھاٹ اتار دیا تفصیل کے مطابق تھانہ سٹی بی ڈویژن کی حدود میں دستگیر کالونی کے رہائشی محمد وسیم نے پولیس کو اپنی شکایت میں بیان کیا کہ اس نے اپنے گھر کی بیٹھک میں حجام کی دکان بنا رکھی ہے اور دکان کے باہر بنچ رکھ کر گاہکوں کو بٹھانے پر ہمسائے ملزم عابد علی اور اس کے درمیان تو تکرار ہو گئی اورملزم نے اسے جان سے ماردینے کی خاطر اس کی دکان سے قینچی اٹھاکر اس پر وار کئے جس کے نتیجہ میں وہ شدید زخمی ہو گیا، واویلا ہونے پر اس کا بھائی ظہیر احمد اور محمدشہباز اس کو بچانے کے لئے موقع پر پہنچ گئے، مزاحمت پر ملزم عابد علی کی مدد کو اس کے دو حقیقی بھائی ملزمان محمدآصف اور محمدساجد بھی آگئے جنہوں نے اس کی دکان سے قینچیاں اٹھا کر اس کے بھائیوں ظہیر احمداور محمدشہباز پر وار کر کے شدید زخمی کر دیا اور انہیں بچانے کے لئے آنے والے اس کے عمر رسیدہ والد محمدادریس پر قینچی کے وار کر کے شدید زخمی کر دیا، واویلا ہونے پر اہل علاقہ کو آتا دیکھ کر ملزمان موقع سے فرار ہو گئے، زخمی ہونے والے باپ، بیٹوں کو طبی امداد کے لئے شیخ زید ہسپتال منتقل کیا جہاں طبی امداد کے باوجود عمر رسیدہ محمدادریس زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گیا۔ پولیس نے بیٹے محمدوسیم کی رپورٹ پر مقدمہ نمبری 229/20 بجرم 302-324/34 ت پ تینوں ملزمان کے خلاف درج کر کے دو ملزمان عابد علی اورمحمدآصف کو گرفتار کر کے حوالات منتقل کر دیا، کارروائی شروع ہے۔حقیقی بھائیوں میں زمین کے تنازعہ پر،دوگروپوں میں تصادم ہواہے جھگڑے میں لاٹھیوں، کلہاڑیوں اور آتشی اسلحے کا آزادانہ استعمال،25 سالہ نوجوان موقع پر جاں بحق ہوگیا۔ تفصیل کے مطابق تھانہ احمد پور لمہ کی حدود چک 24 این پی بستی جام لعل بخش واسا کے رہائشی غلام محمد نے پولیس کو اپنی تحریری شکایت میں بیان کیا کہ اس کے سالوں حقیقی بھائی محمدحلیم اور مراد علی میں کافی عرصہ سے زمین کا تنازعہ چلا آرہا تھا جن کی صلح برادری طور پر کرانے کی کوشش کی تھی۔ گذشتہ روز اس کا 25 سالہ بیٹا غلام محی الدین گھر میں موجود تھا کہ اسی دوران ملزمان خالد، اجمل،حلیم، شاہدعلی، طاہر علی، عارف علی، محمداحمد،محمداکرم اور محمداصغرنے گھر میں زبردستی داخل ہو کر حملہ کر دیا۔ لاٹھیوں، کلہاڑیوں او رآتشی اسلحہ سے انہیں بیہمانہ تشدد کا نشانہ شروع کر دیا۔ مزاحمت پر ملزمان نے فائر مارکر اس کے نوجوان بیٹے غلام محی الدین کو موت کے گھاٹ اتار دیا اور 35 سالہ محمدرفیق،45 سالہ مراد علی،45 سالہ ریاض احمد، 68 سالہ مائی وادھل، 30 سالہ اللہ وسایا، 55 سالہ محمدعرفان، 34 سالہ محمدعارف، خلیل احمد، شاہد حسین، جھگڑے کے دوران زخمی ہو گئے جبکہ ملزمان کی جانب سے جھگڑے میں زخمی ہونے والے محمداجمل،خالد، حلیم، عارف اور طاہر محمودشامل ہیں۔ اطلاع پا کر پولیس نے موقع پر پہنچ کر مقتول غلام محی الدین کی نعش تحویل میں لے کر پوسٹمارٹم کے لئے ہسپتال منتقل کر دی اور زخمیوں کو ہسپتال میں طبی امداد فراہم کی جا رہی ہے جبکہ 25 سالہ محمداجمل کی حالت تشویشناک بیان کی جا رہی ہے۔ تاہم پولیس نے دو ملزمان محمدخالد اور محمد اجمل کو گرفتار کر لیا۔ مقتول کے والد غلام محمد کی رپورٹ پر مقدمہ نمبری 145/20 بجرم302-149-324ت پ کا درج کر کے کارروائی شروع کر دی ہے۔ ٹریفک حادثات میں شدید زخمی ہونے والے 3 افراد ہسپتال میں دم توڑ گئے، ٹریفک کا پہلا حادثہ اوباڑو کے رہائشی 50 سالہ دھنی بخش کے ساتھ پیش آیا جو موٹر سائیکل پر سوار ہو کر قومی شاہراہ پر جا رہا تھا کہ اسی دوران تیز رفتار ٹرک نے ٹکر مار دی جس کے نتیجے میں وہ شدید زخمی ہو گیا دوسرا حادثہ لیاقت پور کے رہائشی 53 سالہ جند وڈا کے ساتھ پیش آیا جو اپنے موٹر سائیکل پر سوار ہو کر جا رہا تھا کہ تیز رفتاری کے باعث سامنے سے آنے والی کار سے ٹکر گیا اور شدید زخمی ہو گیا جبکہ تیسرا حادثہ جیکب آباد کے رہائشی 34 سالہ شوکت علی کے ساتھ پیش آیا جو اپنی کار پر سوار ہو کر جا رہا تھا کہ تیز رفتاری کے باعث کار الٹ گئی اور وہ شدید زخمی ہو گیا ورثاء نے طبی امداد کیلئے شیخ زید ہسپتال منتقل کیا جہاں طبی امداد کے باوجود تینوں افراد جانبر نہ ہو پائے اور دم توڑ گئے۔26 سالہ شخص نے گلے میں پھندا ڈال کر خودکشی کرلی تفصیل کے مطابق تھانہ کوٹ ادو کے علاقہ موضع طلائی چندھرڑ میں محمد امین چانڈیہ کا 26 سالہ بیٹا محمد سلیم علی الصبح اپنے گھر سے ایک کلو میٹر دور اپنے رقبہ پر گندم کی کٹائی کیلئے گیا، 9بجے صبح علاقہ کے نزدیکی رشتہ دار نذر چانڈیہ نے گلہ میں صافہ ڈلی ٹولہا کے درخت کے ساتھ لٹکی ہوئی اس کی نعش دیکھی جس نے پولیس کو اطلاع کی، پولیس تھانہ کوٹ ادو کے اسسٹنٹ سب انسپکٹر اخلاق احمد نے موقع پر پہنچ کر لاش کو درخت سے اتارا اور پوسٹ مارٹم کے لئے تحصیل ہیڈ کوارٹر اسپتال منتقل کردیا گیا،پوسٹ مارٹم کے بعد لاش ورثا کے حوالے کر دی گئی، تاہم خودکشی کی وجوہات معلوم نہ ہو سکی۔کرم پور،لڈن روڈ پر اڈہ ذاکر آباد کے قریب پیچھے سے آنے والی تیز رفتار کار نے موٹرسائیکل سواروں کو کچل ڈالا دو نوجوان حافظ قرآن موٹر سائیکل سوارموقع پرجاں بحق جبکہ تیسرا حافظ قرآن شدید زخمی۔تین حافظ قرآن موضع حسن شاہ کا رہائشی27 سالہ نیاز احمد ولد حافظ محمد رمضان قوم کھرل،ذاکر آباد کارہایشی 15سالہ محمد ارسلان ولد محمد منظور قوم کمہاراوربستی کریم واہ کا رہائشی 18سالہ محمد عباس ولد محمد صدیق بستی فہیم شاہ موضع حسن شاہ کی مسجد میں نماز تراویح اور دیگر نمازیں پڑھاتے ہیں۔نماز فجر کی ادائیگی کے بعد تینوں نوجوان حافظ قرآن ایک ہی موٹر سائیکل پر اپنے گھر وں کو جا رہے تھے کہ اڈہ ذاکر آباد کے قریب پیچھے سے آنے والی تیز رفتار کار بے قابو ہو کر اوپر چڑھ گئی جس کے نتیجہ میں حافظ نیاز احمد اور حافظ محمد ارسلان موقع پر دم توڑ گیے جبکہ حافظ محمد عباس کو تشویشناک حالت میں بی ایچ وی ہسپتال ریفر کر دیا گیا ہے۔ نا معلوم کار ڈرائیور کار سمیت فرار ہوگیاایس ایچ او تھانہ کرم پور رانا نیک محمد نے پولیس کی نفری کے ہمراہ موقع پر پہنچ کر کاروائی شروع کر دی۔تھانہ ممتازآباد کے علاقے40سالہ نامعلوم شخص کی نعش برآمد ہوئی ہے۔ پیر عمر قبرستان حیدری کالونی سے نامعلوم شخص مردہ حالت میں پایا گیا جس کی اطلاع پر متعلقہ پولیس نے موقع پر پہنچ کر نعش تحویل میں لیکر نشتر ہسپتال کے سرد خانہ منتقل کردی گئی،پولیس کے مطابق مرنے والا نشئی،جو نشہ کا عادی تھا جس کی شناخت نہ ہوسکی ہے۔

خود کشی

مزید :

ملتان صفحہ آخر -